حلب کےہوائی اڈے پراسرائیلی فضائی حملے’جنگی جرم‘کے مترادف ہیں:شامی وزارت خارجہ

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
دو منٹ read

شام کی وزارت خارجہ نے ملک میں شہری بنیادی ڈھانچے پر اسرائیل کے فضائی حملوں کو’’بین الاقوامی قوانین کے مطابق جنگی جرم‘‘قرار دیا ہے۔

وزارت خارجہ نے بدھ کو ایک بیان میں خاص طور پر شمال مغربی شہر حلب کے بین الاقوامی ہوائی اڈے پر منگل کی رات دیر گئے اسرائیلی فوج کے فضائی حملے کا حوالہ دیا ہے۔صہیونی فوج نے ایک ہفتے میں دوسری مرتبہ اس ہوائی اڈے کو میزائلوں سے نشانہ بنایا ہے جس سے پروازیں معطل ہوکررہ گئی ہیں۔

بیان میں کہا گیا ہے کہ اسرائیل کو ان حملوں کا حساب دینا ہوگا۔قبل ازیں شام کے سرکاری ذرائع ابلاغ نے منگل کی شب بتایا کہ اسرائیلی فوج کے فضائی حملے سے حلب کے بین الاقوامی ہوائی اڈےکے رن وے کو نقصان پہنچا ہے،وہ ناکارہ ہوگیا ہے۔

شام کے فوجی ذرائع نے بتایا کہ اسرائیل نے بحر متوسط سے یہ میزائل حملہ کیا تھا۔اسرائیلی فوج نے31 اگست کو بھی اسرائیلی فوج نے اس ہوائی اڈے پر راکٹ داغے تھے جس کے نتیجے میں مادی نقصان ہوا تھا۔ایران کے حمایت یافتہ علاقائی اتحاد کے کمانڈرنے بتایا کہ اس حملے میں حلب کے ہوائی اڈے کو نقصان پہنچا تھا اور یہ ایران سے ایک طیارے کی آمد سے عین قبل کیا گیا تھا۔

انٹیلی جنس ذرائع کا کہنا ہے کہ اسرائیل ایران کی جانب سے حزب اللہ سمیت شام اور لبنان میں اتحادیوں کو اسلحہ کی ترسیل کوروکنا اور اس مقصد کے لیے فضائی سپلائی لائنوں کے بڑھتے ہوئے استعمال کو ختم کرنا چاہتا ہے۔اس مقصد سے اس نے شام کے ہوائی اڈوں پرمیزائل اور راکٹ حملے تیزکردیے ہیں۔

ایران نے اسلحہ کی زمینی راستے سے منتقلی میں رکاوٹوں کے بعد شام میں اپنی افواج اور اتحادی جنگجوؤں کو فوجی سازوسامان پہنچانے کے اب زیادہ قابل اعتماد ذریعے کے طور پر فضائی نقل وحمل کو اپنایا ہے۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں