سعودی عرب کا ملکہ الزبتھ کی وفات پر اظہار تعزیت

ملکہ برطانیہ ہماری دیرینہ اور ثابت قدم دوست تھیں، خدمات یاد رکھی جائیں گی: سعودی سفارت خانہ

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
دو منٹ read

سعودی عرب نے برطانیہ کی ملکہ الزبتھ دوم کی وفات پر اظہار افسوس کیا ہے۔

برطانیہ میں سعودی سفارت خانے نے اپنے تعزیتی بیان میں کہا سفارت خانہ اپنے مملکت اور سعودی قوم کی جانب سے ملکہ الزبتھ دوم کی وفات پر برطانوی شاہی خاندان اور برطانوی قوم اور دولت مشترکہ سے اظہار تعزیت کرتا ہے۔

بیان میں مزید کہا گیا برطانوی ملکہ سعودی عرب کی طویل اور ثابت قدم دوست رہی ہیں۔ اپنے ملک اور اپنی عوام کے لیے ان کی بے شمار خدمات ہمیشہ یاد رکھی جائیں گی۔

گھنٹوں کی قیاس آرائیوں کے بعد برطانوی شاہی خاندان نے جمعرات کو سکاٹ لینڈ کے شاہی بالمورل پیلس میں ملکہ الزبتھ دوم کی موت کا اعلان کیا. 96 سال کی عمر میں وفات پانے والی ملکہ الزبتھ کی انتقال کے موقع پر ان کے بچے، پوتے اور پوتیاں ان کے قریب موجود تھے۔

بکنگھم پیلس نے ملکہ کی دنیا سے رخصتی کا اعلان ایک بیان کے ذریعہ کیا جس میں کہا گیا کہ بادشاہ چارلس اور ان کی اہلیہ کامیلا آج رات بالمورل میں قیام کریں گے اور کل لندن واپس لوٹیں گے۔

دن بھر برطانیہ میں ذرائع ابلاغ ملکہ کی بگڑتی ہوئی صحت کے بارے میں شہ سرخیاں بنائیں۔ بتایا گیا کہ ملکہ کو ڈاکٹروں کی نگرانی میں رکھا گیا ہے اور ڈاکٹروں نے زوم ایپلی کیشن کے ذریعے ان کے لیے ایک اہم ملاقات منسوخ کرنے کی سفارش کی تھی۔

ملکہ کہ صحت کی خرابی کے بعد ان کے بیٹے اور برطانوی تخت کا وارث، 73 سالہ شہزادہ چارلس اپنےبڑے بیٹے ولیم کے ساتھ المورل پہنچے تھے۔ شہزادہ چارلس کو صدیوں پرانی برطانوی شاہی روایات کے مطابق ملکہ الزبتھ کی موت کے بعد بادشاہ قرار دیا گیا یے۔ ملکہ کی بیٹی شہزادی این پہلے اے ہی ان کے ساتھ تھی۔

شہزادہ ہیری بھی ملکہ کے پاس پہنچ گئے۔ ہیری نے پروگرام کے مطابق اگلے جمعرات کو ایک تقریب میں شرکت کے لیے برطانیہ مکں آنا تھا تاہم انھوں نے اب اس تقریب کو منسوخ کر دیا۔ شہزادہ اینڈریو اور البرٹ بھی ملکہ الزبتھ کے پاس پہنچ چکے تھے۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں