سعودی گلوکارہ لنا اللبودی نے انگریزی میں گانے نے دھوم مچا دی

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
دو منٹ read

اپنی سریلی اور نرم آواز میں عربی سامعین کے دلوں کےتارچھیڑنے اور سریلی آواز میں عربی موسیقی سے لوگوں محظوظ کرنے والی سعودی موسیقارہ لنا اللبودی کے اس وقت مغربی دنیا میں بھی خوب چرچے ہیں۔ لنا اللبودی نے حال ہی میں انگریزی زبان میں گانا گا کر لاکھوں مداحوں میں اضافہ کیا ہے۔ سوشل میڈیا پر لنا اللبودی کے اس انگریزی گانے پرانہیں بھرپور داد پیش کی جا رہی ہے۔

"العربیہ ڈاٹ نیٹ" کو دیے گئے ایک انٹرویو میں فنکارہ لنا اللبودی نے بتایا کہ وہ شہزادی نورا یونیورسٹی میں مارکیٹنگ کی تعلیم حاصل کر رہی ہیں، لیکن ساتھ ہی وہ گانے بھی گاتی ہیں۔ موسیقی ان کا بچپن کا جنون ہے، جس کا آغازانہوں نے 9 سال کی عمر میں کیا۔ وہ اپنے گھر میں اپنے خاندان کے سامنے گاتی تھیں۔ انہوں نے کچھ گانے ریکارڈ کیے اور انہیں سوشل میڈیا پرپوسٹ کردیا۔ اسے بچوں کے گانے بہت پسند تھے۔

ایک سوال کے جواب میں اللبودی نے کہا کہ اسے اپنے خاندان کی طرف سے حمایت ملی اور پھر اس نے اسکول کی پارٹیوں اور غیر نصابی سرگرمیوں میں گانا شروع کر دیا۔ اب وہ بہت سی جگہوں پر عوام کے سامنے گاتی ہیں۔ لوگ اس کے گانے بہت پسند کرتے ہیں۔

انہوں نے مزید کہا کہ انہیں انگریزی میں گانا بہت پسند تھا جو کہ ان کی آواز کی خوبصورتی کو اجاگر کرتا ہے، کیونکہ وہ الفاظ کے احساسات کو محسوس کرتی ہیں اور ان کی آواز زیادہ خوبصورت ہے۔ اس نے دو گانے گائے، "میں نہیں رو رہی" اور "ویشالی"، جو ان کے اپنے گانے ہیں۔

اللبودی نے مزید کہا کہ وہ بہت سے کیفے میں گانے میں حصہ لے رہی تھی جہاں عوامی پارٹیوں میں گانے گائے جاتے ہیں۔انہیں مملکت میں فرانسیسی اور جرمن سفارت خانے میں گانے کا موقع بھی ملا۔

گلوکاری کے شعبے میں اپنے فلسفے کے بارے میں انہوں نے بتایا کہ وہ دوسروں کی رائے کی پرواہ کیے بغیر احساس کے ساتھ گانا پسند کرتی ہیں اور نئے گانے، الفاظ اور زبانیں گانا پسند کرتی ہیں کیونکہ وہ تمام زبانوں میں گانا چاہتی ہیں۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں