لبنان میں خاتون نے بنک عملہ یرغمال بنا لیا، پولیس کا بنک پردھاوا، بھگدڑمیں متعدد زخمی

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
دو منٹ read

لبنان میں ایک خاتون جس کی شناخت سالی حافظ کے نام سے کی گئی ہے نے اسلحہ دکھا کر بینک آف لبنان اینڈ دی ڈیاسپورا کے عملے کو یرغمال بنا لیا اور اپنے اکاؤنٹ سے13 ہزار ڈالرکی رقم ڈیپازٹ لینے میں کامیاب ہوگئی۔

تاہم بعد میں لبنانی جنرل سکیورٹی نے مسلح ڈپازٹر کی گرفتاری کا اعلان کیا، جب کہ اس نے بینک سے برآمد کی گئی رقم کے بارے میں معلومات مختلف تھیں۔

العربیہ اور الحدث ذرائع نے بتایا کہ بیروت میں بھگدڑ کے باعث متعدد زخمی بینک کے باہر گر گئے۔

سالی نے اپنے فیس بک پیج پر نشر ہونے والی ایک ویڈیو کے ذریعے اپنے اقدام کا جواز پیش کیا۔ اس نے بتایا کہ میں نے یہ انتہائی قدم اسپتال میں زیرعلاج اپنی بہن کے لیے کیا تھا۔ وہ مررہی تھی اور مجھے اس کی مدد کو پہنچنا تھا۔ خاتون کا کہنا ہے کہ اگر وہ اسلحہ کے ذریعے اپنی رقم وصول نہ کرتی تو اس کے لیے رقوم کا حصول ممکن نہیں تھا۔

یہ بات قابل ذکر ہے کہ سالی الحافظ نے کل اپنے فیس بک پیج پر ایک بیان شایع کیا جس میں اس نے لکھا تھا کہ "اوہ میری زندگی، میں تم سے وعدہ کرتی ہوں کہ تم سفر کرو گی، علاج کراؤ گی اورصحت مند واپس آؤ گی۔ زندگی نے وفا کی تو واپس آکراپنی لخت جگر کی پرورش کرو گی، اگر یہ مجھے مہنگا پڑنے لگتا ہے تو کوئی بات نہیں۔ میری جان مجھ پر اور میرے دشمنوں پر خدا تجھے شفا دے اے میری جان سے زیادہ عزیزبہن۔"

ڈیپازٹر سالی حافظ نے خود پر پٹرول چھڑک لیا اور دھمکی دی کہ اگر اس نے اپنی بیمار بہن کے علاج کے لیے اپنی جمع پونجی حوالے نہ کی تو وہ خود کو آگ لگا لے گی۔

چینل کی جانب سے اپنے ٹویٹر اکاؤنٹ پر نشر کی گئی ویڈیو فوٹیج میں ایک خاتون کو بینک کے اندر ہتھیار لیے ہوئے دکھایا گیا ہے۔

لبنانی ڈپازٹرز ایسوسی ایشن کا کہنا ہے کہ ماؤنٹ لبنان گورنری میں ایلی کے علاقے میں ایک بینک پر دھاوا بول دیا گیا۔ ایسوسی ایشن نے اپنے ٹویٹر اکاؤنٹ کے ذریعے مزید کہا کہ بینک میڈ (میڈیٹیرینین گروپ) ایلی برانچ خاتون کے سامنے جھک گئی۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں