.

اسیران تبادلہ میں فعال کردار: پوتین اور زیلنسکی کا محمد بن سلمان سے اظہار تشکر

بحران کو حل کرنے کیلئے تمام تر کوششیں کریں گے: سعودی ولی عہد کی روسی اور یوکرینی رہنماؤں کو یقین دہانی

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

سعودی ولی عہد اور نائب وزیر اعظم شہزادہ محمد بن سلمان بن عبدالعزیز نے روس کے صدر پوتین کو جمعرات کے روز فون کیا۔ ٹیلی فونک گفتگو کے آغاز میں روسی صدر نے قیدیوں کے تبادلہ کی کامیابی اور اس میں ولی عہد کے نمایاں کردار پر ان کا شکریہ ادا کیا۔

ولی عہد محمد بن سلمان نے کہا سعودی عرب بحران کے سیاسی حل کیلئے اپنی تمام تر کوششیں بروئے کار لانے کیلئے تیار ہے۔

اس موقع پر روسی صدر پوتین نے شنگھائی تعاون تنظیم میں سعودی عرب کی شریک مذاکرات کار کے پر شامل ہونے کی بات بھی کی اور کہا روس کی خواہش ہے کہ سعودیہ شنگھائی تعاون تنظیم میں فعال کردار ادا کرے۔

کال کے دوران، انہوں نے دونوں ممالک کے درمیان تعاون کے پہلوؤں اور مختلف شعبوں میں ان کو بڑھانے کے طریقوں پر تبادلہ خیال کیا۔ دونوں رہنماؤں نے مختلف شعبوں میں تعاون بڑھانے سے متعلق بھی تبادلہ خیال کیا۔

زیلنسکی کا اظہار تشکر

یاد رہے اس سے قبل یوکرینی صدر بھی قیدیوں کے تبادلہ میں کردار ادا کرنے پر سعودی ولی عہد کا شکریہ ادا کرچکے ہیں۔

حمد بن سلمان نے جمعرات کے روز زیلنسکی سے فون پر بات چیت کی ۔ ٹیلیفونک گفتگو کے آغاز میں ہی یوکرینی صدر نے قیدیوں کے تبادلے کے عمل میں سعودی ولی عہد کی کاوشوں کو سراہا اور ان کا شکریہ ادا کیا ۔ انہوں نے کہا دنیا نے ثالثی کو تسلیم کرتے ہوئے مشرق وسطی میں سعودی عرب اہم کردار کو تسلیم کیا ہے۔

سعودی ولی عہد محمد بن سلمان نے کہا سعودی عرب بحران کے سیاسی حل کا شدید خواہاں ہے اور اس کیلئے کی جانے والی تمام عالمی کوششوں کی پر زور حمایت کرتا ہے۔ انہوں نے کہا روس یوکرین جنگ سے پیدا ہونے والے انسانی بحران کے اثرات کو کم کرنے کیلئے مملکت سعودیہ ہرممکن کوششں جاری رکھے گی۔ انہوں نے کہا سعودیہ روس اور یوکرین کے درمیان ثالثی کیلئے تیار ہے۔

زیلنسکی نے ٹوئٹر پر لکھا ہم نے یوکرینی توانائی کے تحفظ ، بعد از جنگ بحالی اور مشترکہ سرمایہ کاری کے منصوبوں پر تبادلہ خیال کیا ہے۔

امریکی شکریہ

وائٹ ہاؤس میں قومی سلامتی کے مشیر جیک سلوان نے بھی روس اور یوکرین کے درمیان قیدیوں کے تبادلہ میں کردار ادا کرنے پر ولی عہد شہزادہ محمد بن سلمان اور سعودی عرب کا شکریہ ادا کیا ہے۔

سلوان نے ٹوئٹر پر کہا اس معاہدہ میں سہولت فراہم کرنے پر ولی عہد اور سعودی عرب کا شکریہ ادا کرتے ہیں۔ امریکہ فریقین کے درمیان ہونے والی قیدیوں کے تبادلہ کی پیش رفت کو خوش آمدید کہتا ہے۔

ایک روز قبل بھی امریکی وزارت خارجہ نے ایک بیان میں کہا تھا کہ سعودی ولی عہد محمد بن سلمان روس اور یوکرین کی جنگ کے دوران انسانیت پر مبنی اقدامات کی مسلسل کوشش کر رہے ہیں۔ متعلقہ ملکوں کے ساتھ ملکر کی جانے والی کوششوں پر شہزادہ محمد بن سلمان کے شکر گزار ہیں۔ ان کاوشوں کی بدولت مراکش، امریکہ، برطانیہ، سویڈن، کروشیا کے دس قیدیوں کو رہائی مل گئی

مقبول خبریں اہم خبریں