حزب اللہ سے کشیدگی پراسرائیل میں سکیورٹی مشاورت

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
دو منٹ read

اسرائیلی وزیر اعظم یائر لیپڈ نے وزیر دفاع، آرمی قیادت اور سکیورٹی سروسز کے رہنماؤں کے ساتھ سکیورٹی سے متعق مشاوری اجلاس کیا۔ اجلاس میں لبنان کے ساتھ سمندری سرحد کی حد بندی کے جاری مذاکرات کے دوران ہی شمالی محاذ پر بڑھتی محاذ آرائی پر تبادلہ خیال کیا گیا۔

العربیہ کے نمائندے نے اطلاع دی ہے کہ اس ملاقات میں لبنان کے ساتھ درپیش حالات کے مختلف منظر ناموں پر تبادلہ خیال کیا گیا۔

گیس نکالنے کی تاریخ طے نہیں پائی

اجلاس میں لیپڈ نے واضح کیا کہ انہوں نے ’’ کاریش‘‘ فیلڈ سے گیس نکالنے کے آغاز کے لیے ابھی تک کوئی حتمی تاریخ طے نہیں کی ہے۔ اسرائیلی ذرائع کے مطابق وسط اکتوبر سے پہلے گیس نکالنے کا کام شروع نہیں ہوگا۔

یاد رہے اسی ماہ کے آغاز میں اسرائیلی وزیر دفاع گانٹس نے حزب اللہ کے رہنما حسن نصر اللہ کو خبردار کیا تھا کہ سمندری حدود کے تعین کے مذاکرات میں کسی قسم کی رکاوٹ نہ ڈالی جائے اور اسی طرح کاریش فیلڈ کے پلیٹ فارم کو نقصان پہنچانے کی کوشش سے گریز کیا جائے۔

ایرانی قوانین

بینی گانٹس نے بعد ازاں ایران پر یہ الزام بھی عائد کیا کہ وہ ایندھن کے لیے اور ملک کیلئے بجلی کے گرڈ کی مرمت کیلئے حزب اللہ پر انحصار کرنے کا زور ڈال کر لبنان کو خریدنے کی کوشش کررہا ۔

انہوں نے کہا کہ انرجی کے میدان میں لبنان کا ایران پر انحصار بالآخر لبنانی سرزمین پر ایرانی اڈوں کے قیام اور خطے کو عدم استحکام کی طرف دھکیلنے کا باعث بن سکتا ہے۔

واضح ہے اسرائیل اور لبنان کئی ماہ سے امریکی ثالث آموس ہاکسٹین کے ذریعہ سے مشترکہ سمندری سرحدوں کی حد بندی کیلئے مذاکرات کر رہے ہیں۔ ایسی حد بندی کے بعد گیس کے ذخائر کی ملکیت طے کرنے میں مدد ملے گی اور سمندر میں نئے ذ خائر دریافت کرنے کی راہ بھی ہموار ہو جائے گی۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں