سعودی نائف یونیورسٹی میں پولیس کی تربیت کیلئے انٹرپول مباحثہ، 78 ملکوں کے ماہرین شریک

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
3 منٹس read

ریاض میں نائف عرب یونیورسٹی برائے سکیورٹی سائنسز کے صدر ڈاکٹر عبدالمجید بن عبداللہ البنیان نے یونیورسٹی ہیڈ کوارٹرز میں پولیس اہلکاروں کی تربیت کے لیے 23ویں انٹرپول سمپوزیم کا افتتاح کیا۔ مباحثہ کا عنوان ’’ وبا کے بعد کی دنیا میں قانون نافذ کرنے والی ایجنسیوں کی تربیت‘‘ تھا۔ اس سمپوزیم میں قریب اور دور دراز کے 78 ملکوں کے ماہرین نے شرکت کی۔

منظم جرائم کا مقابلہ

ڈاکٹر البنیان نے وضاحت کی کہ نائف عرب یونیورسٹی برائے سکیورٹی سائنسز انٹرپول کے ساتھ کئی دہائیوں پر محیط تعلقات کو بہت اہم سمجھتی ہے ۔ انہوں نے کہا مشترکہ کوششوں کا براہ راست اثر سکیورٹی صلاحیتوں کو بڑھانے اور منظم اور سرحد پار جرائم کا مقابلہ کرنے پر ہوتا ہے۔ انہوں نے اس بات پر بھی زور دیا کہ پولیس کے اداروں کی کامیابی ان کے تربیتی پروگراموں کی نوعیت اور فیصلے کرنے کی صلاحیت سے منسلک ہے۔ کامیابی کا انحصار حقائق اوراعداد و شمار کی بنیاد پر پروگرام کولاگو کرنے کے طریقے سے بھی ہوتا ہے۔ اپنے خطاب میں انہوں نے سعودی عرب کےاداروں سے تعاون کرنے پر انٹرپول، اس کے سیکرٹری جنرل جرگن سٹاک، انٹرپول میں ٹیکنالوجی اورانوویشن کے ایگزیکٹو ڈائریکٹر مدن اوبرائے کی تعریف بھی کی۔

تجربات کا تبادلہ

ڈاکٹر البنیان نے کہا یونیورسٹی سکیورٹی کی تعلیم و تربیت کے معیار کو بلند کرنے پر توجہ مرکوز کرنے کی اہمیت سے آگاہ ہے ۔ یونیورسٹی اس بات کی بھی خواہاں ہے کہ پولیس اکیڈمیوں اور سکیورٹی ٹریننگ اداروں کے درمیان تجربات کاتبادلہ کیا جائے اور اس شعبہ میں زیر استعمال بین الاقوامی طریقوں سے بھی آگاہی حاصل کی جائے۔ انٹرپول کے سیکرٹری جنرل جرگن سٹاک نے اس بات پر زور دیا کہ نائف عرب یونیورسٹی کی جانب سے سمپوزیم کی میزبانی دونوں فریقوں کے درمیان سٹریٹجک شراکت داری اور قانون نافذ کرنے والے اداروں میں عالمی تعاون کو مضبوط بنانے کا ذریعہ بنے گا ۔ انہوں نے کہا اس مباحثہ میں شرکا اپنے خیالات اور تجربات کا تبادلہ کررہے ہیں۔ تین دن تک جاری رہنے والے مباحثہ میں کورونا وبا کے بعد قانون نافذ کرنے والے اداروں کے لیے تربیتی طریقہ کار، مشکلات اور کامیابی کی کہانیوں کا جائزہ لینے کی اہمیت پر تبادلہ خیال کیا جائے گا۔ وبا کے دوران استعمال ہونے والے بہترین طریقوں کی بھی آگاہی دی جائے گی۔ اسی طرح مستقبل کی ہنگامی صورتحال سے نمٹنے کیلئے پولیس کی ڈیجیٹل ٹریننگ پر بات چیت کی جائے گی۔

مقبول خبریں اہم خبریں