اماراتی کسٹم حکام جعلی اشیا کی آمد اور سمگلنگ روکنے کے لیے زیادہ مستعد

رواں سال 281 وارداتیں ناکام بنائیں، کروڑ درہم کا سامان ضبط کیا

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
3 منٹس read

دبئی اور متحدہ عرب امارات میں جعلی بیگز، ادویات اور عطریات سمیت بہت سی اشیا کی سمگلنگ روکنے کے لیے کسٹم حکام پہلے سے زیادہ سرگرم ہو گئے ہیں۔ کسٹم کو متحدہ عرب امارات کے 24 فضائی، زمینی اور بحری راستوں سے ممکنہ طور پر سمگلنگ کی کوششوں کو ناکام بنانے کا ٹاسک دے دیا گیا۔

کسٹم حکام کے مطابق 2020 کے مقابلے میں غیر قانونی اور جعلسازی کاروبار کی کوششوں میں اضافہ دیکھنے میں آ رہا ہے تاہم کسٹم حکام نے بھی ان سب کوششوں کو ناکام بنایا ہے۔

کسٹم کے ایک اعلیٰ ذمہ دار یوسف عزیر مبارک نے العربیہ کے ساتھ ایک انٹرویو میں کہا 'جرائم پیشہ عناصر ان کی انٹریز کے خلاف اقدامات سخت اور کوششیں تیز کر دی گئی ہیں۔ تاکہ امارات میں جعلی اشیا، جعلی ادویات اور منشیات کی آمد ممکن نہ ہو سکے۔

انہوں نے کہا ہر سال کروڑوں درہم کی ایسی اشیا کسٹم حکام ضبط کرتے ہیں۔ یوسف عزیر مبارک نے ایک سوال کے جواب میں کہا ' کسٹم حکام نے ایک شپمنٹ کے ذریعے زندگی بچانے والی ادویات کے پر جعلی ادویات کی سمگلنگ روکی۔ کسٹم کو 24 مقامات سے سمگلنگ اور جعلی مال کی امارات روکنے کا ٹاسک دیا گیا ہے۔

ان چوبیس مقامات میں فضائی، بحری اور زمینی راستے شامل ہیں۔ ایک اور سوال کے جواب میں انہوں نے کہا زیادہ جو اشیا ضبط کی گئی ہیں وہ فیشن سے متعلق اور کاسمیٹکس ہیں۔ ان کے علاوہ الیکٹرانکس کا سامان، جعلی سگریٹس، جعلی عطر، جعلی ادویہ تک شامل ہیں۔

ایک اور سوال کے جواب میں انہوں نے بتایا ' 2020 میں دبئی کسٹم نے 34 کیس پکڑے، ان کی مالیت کروڑوں درہم تھی۔ جو غیر قانونی طور پر امارات لانے کی کوشش کی جا رہی تھی۔ یہ تعداد 2021 میں بڑھ کر 63 ہو گئی اور کسٹم نے 63 کامیاب کارروائیاں کیں۔

تاہم 2022 میں اب تک کامیاب کارروائیوں کی تعداد 281 ہو چکی ہے۔ ان کی کارروائیوں میں قبضے میں لی گئی اشیا کی قیمت کا تخمینہ 10 ملین ڈالر ہے۔ دو ہزار بائیس میں اب تک پچاس جعسازوں کے خلاف مقدمات درج کیے گئے ہیں۔

ایک اور کسٹم ذمہ دار الہوسانی نے بتایا جعلی ادویات کا مسئلہ سب سے اہم ہے کہ اس سے لوگوں کی زندگی اور سخت خطرے میں پڑ سکتی ہے۔ انہوں نے بتایا کہ کرونا کے دنوں میں ناقص اور جعلی ماسک بھی کسٹم حکام نے پکڑے تھے۔

ان کے بقول کپڑے، جوتے، گھڑیوں سمیت بہت سی دیگر اشیا کو قبضے میں لیا جاتا ہے۔ ان میں سے جرائم پیشہ لوگ کچھ اشیا غیر قانونی طور پر لانے کی کوشش کرتے ہیں اور چھ جعلی اشیا ہوتی ہیں، کسٹم ان دونوں کو روکتی ہے۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں