فٹبال ورلڈ کپ کے تماشائیوں کے لیے قواعد کا اعلان کر دیا گیا

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
3 منٹس read

قطر میں فٹ بال ورلڈ کپ کی آمد آمد ہے۔ 20 نومبر سے شروع ہونے والے ورلد کپ کے لیے قطر انتظامیہ نے شائقین فٹ بال کے لیے قواعد و ضابطہ جاری کر دیے ہیں۔

مشرق وسطیٰ کے کسی ملک میں پہلی بار فٹبال ورلڈ کپ کھیلا جائے گا، اس موقع پر نہ صرف یہ کہ خطے میں غیر معمولی جوش وخروش دیکھا جا رہا ہے بلکہ شائقین کی بڑی تعداد متوقع ہے۔ اسی پس منظر میں کچھ قواعد کا پیشگی اعلان کیا گیا یے۔

کووڈ 19

ورلڈ کپ دیکھنے آنے والے ہر فین کے لیے لازم ہو گا کہ وہ کووڈ کے تازہ ٹیسٹ کے بعد قطر میں داخل ہو گا۔ یہ شرط ان شائقین کے لیے بھی لازم ہے جنہوں نے ویکسینیشن کرا لی ہے۔

شائقین جن کی عمر چھ سال یا اس سے زیادہ ہو گی ان کے لیے ضروری ہو گا کہ وہ قطر کے لیے روانگی سے صرف اڑتالیس گھنٹے قبل کے دوران کووڈ کا منفی سرٹفکیٹ حاصل کر کے ساتھ لائیں۔

یہ بھی ممکن ہے کہ وہ اپنی روانگی سے پہلے ٹیسٹ کرانے کا ثبوت رکھتے ہوں لیکن ضروری ہو گا کہ وہ قطر پہنچنے سے صرف چوبیس گھنٹے پہلے حاصل کریں۔ اسی طرح ماسک کا استعمال بھی ہر شائق کے لیے اس وقت لازمی ہو گا جب وہ پبلک ٹرانسپورٹ میں سفر کر رہا ہو گا۔

ہیلتھ انشورنس

ورلڈ کپ کے لیے آنے والے شائقین کے لیے ضروری ہے کہ وہ 50 قطری درہم کی رقم ہیلتھ انشورنس کے لیے ادا کریں گے۔ اگر کوئی شخص ویزے میں توسیع چاہے گا تو اسے مزید 50 درہم ادائیگی کرنا ہو گی۔

ہیلتھ انشورنس کے لیے حاصل کی گئی یہ رقم کسی ایمرجنسی میں کسی حادثے کی صورت استعمال ہو گی اور صحت کی سہولت کے لیے بھی۔

حیہ کارڈ

کوئی بھی شخص جو ورلڈ کپ دیکھنے قطر آ رہا ہے اور یکم نومبر کے بعد آنا چاہتا ہے تو اسے حیہ کارڈ کے لیے درخواست دینا ہو گی۔

یہ کارڈ ہر اس شخص کے لیے ہو گا جو ورلڈ کپ دیکھنے آ رہا ہے۔ یہ قابل انتقال نہیں ہو گا۔ اس کارڈ کے رکھنے والے ہر فرد کو ٹرانسپورٹ کی مفت سہولت کے علاوہ میٹرو بس میں بھی مفت سفر کرنے کی سہولت فراہم کی جائے گی۔

لباس

شائقین کو مشورہ دیا گیا ہے کہ وہ ایسا لباس پہنیں گے جس میں کندھے ڈھانپے ہوں گے۔ شاٹس یا بغیر آستین کے لباس کی شائقین فٹ بال کے لیے سفارش نہیں کی جاتی۔ شائستگی سے ہٹے ہوئے لباس پہننے والے شائقین کو بعض عمارتوں میں داخلے کی اجازت سے معذرت کی جا سکتی ہے۔

سگریٹ نوشی

سگریٹ نوشی کی قطر میں اجازت ہے، مگر یہ عوامی مقامات پر ممنوع ہے۔ ان عوامی مقامات میں عجائب گھر، کھیلوں کے کلب، شاپنگ مالز اور ریستوران شامل ہیں۔ خلاف ورزی پر جرمانہ کیا جا سکتا ہے۔

اسی طرح رہے کہ قطر میں الیکٹرانک سگریٹس پر 2014 سے پابندی عائد ہے۔ ای سگریٹ کی درآمد، خریداری استعمال سب ممنوع ہیں۔ اس کی خلاف ورزی کرنےوالے کو تین ماہ قید اور تقریبا 2750 امریکی ڈالر جرمانہ کیا جا سکتا ہے۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں