مہسا اور آزادی کو خراج تحسین پیش کرنے والی بہادر ایرانی خواتین کی کہانی

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
4 منٹس read

ایران میں مہسا امینی کی پولیس کی تحویل میں ہلاکت کے بعد حکومت کے خلاف احتجاج میں خواتین پیش پیش ہیں۔ خواتین امینی کو خراج عقیدت پیش کرنے اور آزای کے لیے جاری جدو جہد میں اپنی جانوں کے نذرانے بھی پیش کررہی ہیں۔

ایک ویڈیو میں اس نے خود کو ریکارڈ کیا جب وہ سڑک پر آنے کی تیاری کر رہی تھی 22 سالہ ہادیس نجفی نے کہاکہ مجھے واقعی امید ہے کہ آج سے برسوں بعد سب کچھ بدل جانے کے بعد میں اس احتجاج میں شرکت کی خوشی محسوس کروں گی۔

اس کے اپنے موبائل فون پر یہ پیغام ریکارڈ کرنے کے کچھ ہی دیر بعد نجفی کو گزشتہ 21 ستمبر کو تہران کے باہر کرج میں ایک مظاہرے میں شرکت کے دوران قتل کر دیا گیا۔

ایمنسٹی انٹرنیشنل کے مطابق نجفی سکیورٹی فورسز کی جانب سے قریبی رینج سے چلائی جانے والی کئی گولیاں چہرے، گردن اور سینے میں لگنے سے ہلاک ہوئیں۔

نجفی ان درجنوں افراد میں سے ایک ہیں جن کے بارے میں انسانی حقوق کی تنظیموں کا کہنا ہے کہ ایرانی سکیورٹی فورسز کی جانب سے مہسا امینی کے قتل کے خلاف شروع ہونے والے مظاہروں کو دبانے کے دوران مارا گیا تھا جب کہ انہیں اخلاقی پولیس نے تین ہفتے قبل حراست میں لیا تھا۔

ایران میں مظاہروں نے ممنوعات اورپابندیوں کو توڑ دیا، حکومت کے خلاف نعرے لگانے کے ساتھ خواتین نے اپنے سر سے اسکارف اتار دیا، لیکن سیکورٹی فورسز نے مہلک طاقت سے جواب دیا، جس کا ایمنسٹی انٹرنیشنل کا کہنا ہے کہ مظاہرین کو قصدا مارے جانے کا خدشہ ہے۔

اس کے غمزدہ خاندان کی طرف سے ریکارڈ کیے گئے ایک ویڈیو کلپ میں، نجفی کی بہن نے ایک بیگ اٹھا رکھا تھا جو ہیڈز کے پاس تھا جب اسے گولی ماری گئی، وہ خون میں لت پت دکھائی دے رہی تھی۔

بہن نے ویڈیو میں کہا کہ"میں پورے قد کے ساتھ کھڑی ہوئی اور مہسا امینی کی بدولت باہر نکلی۔" انہوں نے مزید کہا کہ ہم نے ہیڈز کو کھو دیا اور ہم کسی چیز سے نہیں ڈرتے۔"

ناروے میں قائم انسانی حقوق کی تنظیم IHR کا کہنا ہے کہ کریک ڈاؤن میں سات خواتین سمیت 90 سے زائد افراد مارے گئے جب کہ ایمنسٹی انٹرنیشنل کا کہنا ہے کہ اس نے ہلاک ہونے والے 52 افراد کے ناموں کی تصدیق کی ہے جن میں پانچ خواتین، ایک لڑکی اور پانچ لڑکے شامل ہیں۔

جن خواتین کو قتل کیا گیا ان کے رشتہ داروں کے مطابق، ان کے پاس سیاسی سرگرمی کا کوئی سابقہ تجربہ نہیں تھا اور وہ ایک ایسی تحریک کے لیے سڑکوں پر نکلیں جو ان کے خیال میں امید کی بے مثال کرن لا سکتی ہیں۔

واشنگٹن میں عبدالرحمن بورومند سینٹر کی ایگزیکٹو ڈائریکٹر رویا بورومند نے اے ایف پی کو بتایا، "خواتین اس تحریک اور کرد خواتین کے زیر اہتمام پہلے احتجاج میں سب سے آگے تھیں۔

امینی ایک ایرانی-کرد لڑکی تھی جس کا نام زینا ہے، کا جنازہ کردستان صوبے میں اس کے آبائی شہر سقاز میں ادا کیا گیا۔

ناروے میں قائم انسانی حقوق کی تنظیم "ہینگاؤ" کے مطابق، 62 سالہ مینو مجیدی شمال مغربی ایران کے کردوں کے آباد شہر کرمانشاہ میں گزشتہ 20 ستمبر کو ایک مظاہرے کے دوران سکیورٹی فورسز کی جانب سے چلائی گئی گولی سے ہلاک ہو گئے تھے۔

سوشل میڈیا پر پھیلنے والی ایک انتہائی چیلنجنگ تصویر میں مجیدی کی ایک بیٹی اپنی والدہ کی قبر کے پاس نظر آئی جس کے سر پر پھولوں سے ڈھکی ہوئی تھی اور اس کے سر پر کوئی چیز نہیں تھی اور وہ سیاہ لباس میں ملبوس تھی، جب کہ اس کی گردن سفید اسکارف سے لپٹی ہوئی تھی۔

اپنی والدہ اور مہسا امینی کے ساتھ اظہار یکجہتی کے واضح اشارے میں وہ بالوں کے لمبے لمبے تالے پکڑے ہوئے تھے جو اس نے کاٹے تھے۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں