سعودی خاتون 100 سے زیادہ قسم کی روٹیاں بنا کر بیچنے لگی

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
4 منٹس read

سعودی عرب میں روٹی بنانے والی خاتون نے حیران کن طور پر 100 سے زیادہ قسم کی روٹیاں بنانا شروع کردیں۔ شیف رنا البرھومی نے کہا کہ مجھے بچپن سے ہی بیکڈ اشیا سے محبت تھی۔ یہ محبت بیکڈ مال کی مہارت دینے والے جرمن سکولوں میں ضمنی مطالعہ میں بدل گئی اور یہ محبت اپنا سفر طے کرتی ہوئی اب 100 قسم کی روٹیاں بنانے تک پہنچ گئی ہے۔

انہوں نے کہا کہ میں نے صرف جذبات پر اکتفا نہیں کیا بلکہ میں نے پروجیکٹ کو سرمایہ کار کے نقطہ نظرسے دیکھا۔ گاہک کی صحت پر توجہ مرکوز کی۔ صحت مند اشیا، تنوع اور عمدگی پر بھرپور توجہ دی۔ رنا اب جدہ میں بیکڈ اشیا کی فروخت کا کام کررہی ہیں۔

العربیہ ڈاٹ نیٹ سے بات کرتے ہوئے رنا البرھومی نے کہا میں بیکڈ اشیا سے محبت کرتی ہوں اور اس دنیا میں اپنے شوق کو تجربے میں بدلنے میں کامیاب ہوگئی ہوں ۔ جرمنی میں اپنی موجودگی سے فائدہ اٹھاتے ہوئے روٹی کی مختلف اقسام کو سیکھا۔ معلوم ہوا کہ روٹیوں کی ایک ہزار سے زائد اقسام ہیں۔

یونیورسٹی کی تعلیم

رنا نے کہا کہ اسے لاجسٹک کے شعبے میں جرمنی میں تعلیم حاصل کرنے کے لیے بھیجا گیا تھا، میں نے وطن واپس آنے کا تہیہ کر رکھا تھا۔ جس ملک میں میں نے تعلیم حاصل کی تھی ، یہاں پر بیکڈ اشیا کی اہم ترین معلومات موجود تھیں۔ میں نے اس عرصہ میں زیادہ سے زیادہ فائدہ اٹھاتے ہوئے پکی ہوئی اشیا کے تجربات کو سیکھا۔

بیکری کی دنیا

انہوں نے مزید کہا کہ میرا تجربہ معمولی تھا اور جب وہ بیکڈ مال کی دنیا میں داخل ہوئی تو اس نے بیکڈ اشیا کی تیاری کے لیے ایک خاص کیمسٹری دریافت کی جس سے وہ حیران رہ گئیں۔ پھر سعودی عرب واپسی کے بعد ایک پروجیکٹ کھولا۔ والدین اور بہنوں سے تعاون حاصل کیا۔ انہوں نے گاہکوں کے ساتھ رویے اور پریزنٹیشن کا طریقہ بتاتے ہوئے کہا کہ روٹی کی ثقافت عالمی ہے ۔

خصوصیات

انہوں نے مزید کہا کہ وہ بیکنگ کا عمل خود کرتی ہے اور عملے کو بغیر چینی اور بلیچ یا کیمیکلز کے اعلیٰ معیار کا پکا ہوا سامان فراہم کرنے کی تربیت بھی دیتی ہے۔

عرب اور یورپی بیکڈ اشیا میں فرق

انہوں نے کہا کہ خمیر، چینی اور ہائیڈروجنیٹڈ تیل کے استعمال کے لحاظ سے عرب اور یورپی بیکڈ اشیاء میں فرق ہے، انہوں نے کہا کہ آٹے کے ابال کے وقت میں فرق ہے جو فائدہ مند بیکٹیریا بنانے کے لیے 24 گھنٹے تک پہنچ جاتا ہے۔

گھر والوں کی حمایت

انہوں نے بیان کیا کہ اسے اپنی ماں اور بہنوں کی طرف سے حمایت اور مدد ملی جب انہیں میرے روٹی بنانے کے شوق کا معلوم ہوا تو انہوں نے میرے ساتھ پورا تعاون کیا۔ انہوں نے بتایا میری والدہ ایک معلمہ اور سکول کی پرنسپل ہیں ۔انہوں نے کامیابی حاصل کرنے اور اسے قائم رکھنے کے لیے میرا بہت ساتھ دیا جس کی جہ سے میں جرمنی میں بیکنگ سرٹیفکیٹ حاصل کرکے اپنا پروجیکٹ لگانے میں کامیاب ہوئی ۔

اس نے اپنی بات کا اختتام یہ کہہ کر کیا کہ وہ بیکری کی دنیا میں اپنے پروجیکٹ کو ترقی دینے اور مختلف قسم کی روٹیوں کی ممکنہ ترکیبیں سیکھنے اور اس معلومات کو خوراک کے ماہرین کے استعمال کے لیے فراہم کرنا چاہتی ہیں۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں