سعودی آرٹسٹ شمس الزھرانی کے قطر’ورلڈ کپ ٹاور‘ پر پینٹنگ کے چرچے

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
3 منٹس read

بچپن سے ہی فن سے محبت کی وجہ سے سعودی آرٹسٹ شمس الزہرانی نے مصوری کے اپنے شوق کو برقرار رکھا۔اس کا یہ شوق سفر فنون لطیفہ کے شعبے میں مہارت کے اس مقام تک جا پہنچا کہ الزاھرانی خلیجی ریاست قطر میں ورلڈ کپ ٹاور پر پینٹ کرنے کے لیے کام کرنے والی ٹیم میں منتخب ہو گئیں۔ الزھرانی نے انجینیر بدر البلوی اور خطاط احمد السلیمانی کے تعاون سے قطر ٹاور پرقرآن پاک کی آیت "وجعلناكم شعوبا وقبائل لتعارفوا"[اور تمہیں قوموں میں تقسیم کی اور قبیلے تعارف کے لیے بنائے‘‘. کا متن تحریر کیا۔

اس حوالے سے آرٹسٹ شمس الزہرانی نے اس آئیڈیا کی کامیابی پر خوشی کا اظہار کیا جس سے انہوں نے اس فنی کام میں کامیابی اور سربلندی حاصل کرنے کے لیے بھرپور کوشش کی۔

’العربیہ ڈاٹ نیٹ‘ سے بات کرتے ہوئے انہوں نے بتایا کہ انہیں ’سیشور‘ کمپنی نے انتخاب کے لیے نامزد کیا تھا، جس نے سعودی عرب کے ایک آرٹسٹ انجینیر بدر البلوی کو ایک موزوں مصور کا انتخاب کرنے کے لیے نامزد کیا تھا۔ انہوں نے 250 مرد اور خواتین آرٹسٹوں کی ایک بڑی فہرست کے درمیان شمس الزھرانی کو قبول کیا۔

قطر میں پینٹنگ کے دوران پیش آنےوالی مشکلات کے بارے میں شمس الزھرانی نے بتایا کہ ’قطر ٹاور‘ پر آیت قرآنی کی خطاطی ایک مشکل چیلنج تھا۔ انہوں نے سخت اور طویل گرمی میں یہ کام شروع کیا۔ نمی اور اونچائی کی وجہ سے انہیں اپنے کام میں کافی دشواری کا سامنا کرنا پڑا ہے۔

کام کے خیال کے بارے میں انہوں نے کہا کہ اس خیال میں قطر کے ایجوکیشن سٹی میں دس منزلہ ٹاور اور دوحہ میں سب سے اہم ٹاور پر الفاظ کے ساتھ سیاہ اور سفید میں ڈرائنگ شامل ہے کیونکہ یہ اسٹیڈیم کے قریب اور نمایاں نشان واقع ہے۔ ہم مسلسل آٹھ گھنٹے روزانہ اور بارہ دن یہ کام کرتے رہے۔ بعض اوقات ہماری ٹیم کو رات کے وقت بھی کام کرنا پڑتا تھا۔

اونچائی پر پینٹنگ کے تجربے کے بارے میں انہوں نے کہا کہ یہ کام کا پہلا تجربہ ہےاور یہ ٹیم کے تعاون سے کامیاب ہوا۔ یہ کام اپنے پچھلے کاموں سے مختلف ہے کیونکہ مشکل چیلنج اور ملک کی نمائندگی کرنے کے لیے ذمہ داری کا احساس اور اس پروجیکٹ کی کامیابی تک پہنچنے کے لیے ورک ٹیم کی معاونت کے بغیریہ ممکن نہیں تھا۔

شمس الزھرانی کا کہنا ہے کہ قطر میں تازہ آرٹ ان کا واحد آرٹ ورک نہیں بلکہ وہ اس سے قبل کئی مقامی اور بین الاقوامی آرٹ نمائشوں میں حصہ لے چکی ہیں۔ انہوں نے مصر، اردن، ترکیہ، دبئی اور مراکش سمیت کئی ممالک میں آرٹ نمائشوں میں اپنے فن پارے پیش کیے۔

انہوں نے تبوک کی میونسپلٹی کے ساتھ مقامی نجی اور عوامی نمائشوں اور دیواری کاموں میں بھی حصہ لیا اور تبوک چیمبر آف کامرس کے ساتھ 1200 میٹر کے علاقے کے ساتھ ساتھ العلارائل کمیشن کے ساتھ 400 میٹر کے علاقے پر آرٹ کے نمونےتیار کیے۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں