حرمین شریفین کی سائبر سکیورٹی سرخ لکیر ہے جسے عبور نہیں کیا جاسکتا: السدیس

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
1 منٹ read

صدارت عامہ برائے امور حرمین شریفین کے جنرل صدر الشیخ عبدالرحمٰن السدیس نے اس بات پر زور دیا ہے کہ حرمین شریفین کی سائبر سکیورٹی ایک سرخ لکیر ہے جسے عبور نہیں کیا جاسکتا۔ انہوں نے زور دے کر کہا حرمین شریفین کے انتظامی امور کا ذمہ دار ادارہ کسی بھی قسم کی سائبر سکیورٹی کی خلاف ورزی اور خطرے سے پوری قوت سے نمٹے گا۔ ان کا کہنا تھا کہ حرمین شریفین میں اعلیٰ ترین بین الاقوامی معیارات کے مطابق سائبر سکیورٹی کے انتظامات موجود ہیں۔

سائبر سکیورٹی سے متعلق آگاہی کے حوالے سے السدیس نے ایک تقریر میں حرمین شریفین سائبر آکٹوپس کے حملوں کے لیے کسی بھی کمرے کو کھولنے سے لے کر ایک محفوظ اور قابل اعتماد سائبر اسپیس بنانے کی ضرورت پر زور دیا۔

صدر جنرل نے حرمین شریفین میں سائبر سکیورٹی کے بہترین پراجیکٹ کے لیے ایک عظیم الشان انعام پیش کرنے کا اعلان کیا۔ انہوں نے سائبر سکیورٹی اتھارٹی اور متعلقہ حکام کے ساتھ مل کرمسجد حرام اور مسجد نبوی میں سائبر سکیورٹی کانفرنس کے انعقاد کی سفارش کی۔

السدیس نے نیشنل سائبرسکیوریٹی اتھارٹی کے تعاون سے اپنے ملازمین کے لیے "اسپیس نہ کھولیں" کے عنوان سے ایک پینل ڈسکشن کا اہتمام کرنے کے علاوہ سائبر سکیورٹی کے کلچر کو پھیلانے کے لیے ایک خصوصی شعبہ کے قیام کا بھی اعلان کیا۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں