سلمان رشدی کے سرکی قیمت مقرر کرنے پر ایرانی ادارہ امریکی پابندیوں کی زد میں آگیا

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
دو منٹ read

امریکہ نے ایران کی خرداد فاونڈیشن پر پابندی لگا دی ہے۔ اس ایرانی ادارے پر پابندی شاتم رسول سلمان رشدی کے ساتھ اظہار یکجہتی اور اس کے خلاف خرداد فاونڈیشن کے مقرر کیے گئے انعام کی وجہ سے لگائی گئی ہے۔

جمعہ کے روز ایران کے اس ادارے پر لگائی گئی پابندی کی وجہ یہ بنی ہے کہ اس ادارے نے کئی سلمان رشدی کے سر کی قیمت مقرر کئی ملین ڈالر مقرر کر رکھی ہے۔

یہ امریکی اقدام سلمان رشدی پر حالیہ ماہ اگست میں کیے گئے ایک قاتلانہ حملے کے بعد سامنے آیا ہے جس کے نتیجے میں شاتم رسول اپنی ایک آنکھ کی بینائی محروم اور ایک بازو کو حرکت دینے سے معذور ہو چکا

ایرانی ادارے خرداد فاونڈیشن نے 1989 میں سلمان رشدی کے سر کی قیمت مقرر کی تھی جب وہ اپنے ملک بھارت میں رہتا تھا اور اس نے اللہ کے آخری نبی صلی اللہ علیہ وسلم کی شان میں گستاخیوں پر مبنی کتاب لکھی تھی۔ بعد ازاں سلمان رشدی کو لندن میں پناہ دے دی گئی ۔ وہ اب لندن اور امریکہ میں ہی رکا ہو ا ہے۔

امریکی محکمہ خزانہ کی طرف سے جاری کیے گئے ایک بیان میں خرداد فاونڈیشن کو بطور خاص دہشت گرد تنظیم قرار دیا گیا ہے۔

ماہ اگست میں ایک لبنانی نژاد امریکی مسلمان کے چاقو حملے کی زد میں آنے والا سلمان رشدی ابھی تک ہسپتال میں زیر علاج ہے۔ کیونکہ حملے کے دوران اس کے جگر کو بھی نقصان پہنچا ہے۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں