ترکیہ کی عرب ممالک میں مداخلت مُسترد، اپنےاصولی موقف پرقائم ہیں: عرب لیگ

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
دو منٹ read

اتوار کے روز عرب لیگ نے زور دے کر کہا ہے کہ ترکیہ کی عرب ممال کے اندرونی معاملات میں مداخلت کو مسترد کرنے سے متعلق لیگ کا موقف واضح اورمستقل ہے۔اس میں کوئی تبدیلی نہیں آئی ہے۔یمنی وزیر خارجہ نے العربیہ کوبتایا کہ الجزائرمیں ہونے والے عرب لیگ کے اجلاس میں یمن کےمعاملے پر مکمل عرب اتفاق رائےپایا گیا۔ سربراہ اجلاس کے تمام امور زیر بحث آئے اور یمن کے حوالے سے تمام عرب ممالک ایک صفحے پر ہیں۔

الجزائر کے وزیر خارجہ رامطان لعمامرا نے کہا کہ وزرائے خارجہ کی مشاورت متفقہ ہے اور عرب سربراہی اجلاس میں رہ نماؤں کے کام کو آسان بناتی ہے۔

’العربیہ‘ کے ذرائع نے بتایا کہ عرب وزرائے خارجہ کے اجلاس میں ترکیہ اور ایران کی مداخلتوں کی مذمت میں ایک پیش رفت ہوئی اور مراکش الجزائر کشیدگی پر قابو پانے میں کامیابی ملی۔

عرب لیگ کے اسسٹنٹ سیکرٹری جنرل حسام ذکی نے اتوار کو عرب وزرائے خارجہ کے اجلاس کے موقع پر اپنے بیانات میں اعلان کیا کہ تمام امور پر اتفاق رائے ہو گیا ہے۔ انہوں نے اس بات پر زور دیا کہ کسی بھی معاملے کو ملتوی نہیں کیا گیا، اس بات کی وضاحت کی کہ سربراہی اجلاس میں پیش کیے گئے مسائل پر اتفاق رائے پایا جاتا ہے۔

حسام ذکی نے اشارہ کیا کہ فوڈ سکیورٹی پر متفقہ حکمت عملی پر سوڈان کا وژن سربراہی اجلاس میں پیش کیے گئے مسائل میں شامل ہے۔

ذکی نے اس بات پر بھی زور دیا کہ لیبیا کی فائل، دیگر سیاسی امور کی طرح، بحرانوں کے تناظر میں ہے، کیونکہ عام طور پر اس پر ایک مسودہ قرارداد باقی ہے۔

انہوں نے مزید کہا کہ "الجزائر اعلامیہ" پر میزبان ملک اور دیگر ممالک کے درمیان مشاورت جاری ہے۔

درایں اثنا فلسطینی وزیر خارجہ ریاض المالکی نےکل اتوار کے روز صدر عبدالمجید تبون کی قیادت میں فلسطینیوں کے دوبارہ اتحاد میں الجزائر کے کردار کی تعریف کی۔

کانفرنسز پیلس میں ان کے لیے ایک پریس کانفرنس میں ریاض المالکی نے کہا کہ "الجزائر نے فلسطینیوں کو دوبارہ متحد کرنے کی کوشش کی ہے اور ہم اس کوشش پر الجزائر کےشکر گزار ہیں۔

المالکی نے الجزائر اعلامیہ پر دستخط کرنے والے تمام افراد سے کہا کہ وہ اسے عملے جامہ پہنانے کے لیے کام کریں۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں