مصر سے اسرائیلی پائلٹوں کو کیوں نکالا گیا، تفصیلات سامنے آ گئیں

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size

اسرائیلی میڈیا نے مصر کی جانب سے 11 اسرائیلی پائلٹوں کو ملک بدر کیے جانے کے واقعے کے بارے میں نئی تفصیلات ظاہر کیں جو بدھ کو ملک میں پہنچے تھے اور انھیں مصر میں داخل ہونے سے روک دیا گیا تھا۔

اسرائیلی "کان حدشوت" چینل نے کہا کہ مصر میں پیش آنے والا واقعہ ان دو ممالک کے درمیان غیر معمولی ہے جن کے درمیان کئی سال پہلے امن معاہدہ ہونا تھا۔ ریڈیو رپورٹ میں مزید کہا گیا ہے کہ اسرائیلی پائلٹ مصر کی فضائی حدود میں داخل ہونے کے بعد بھی مصر میں پھنسے ہوئے ہیں جو بورڈ طیاروں پر مصر داخل ہوئے تھے۔

اسرائیلی ٹیلی ویژن نے دعویٰ کیا کہ پائلٹوں نے لینڈنگ کی اجازت پہلے سے حاصل کی اور بدھ کی سہ پہر وہاں پہنچے لیکن انہیں ملک میں داخل ہونے کی اجازت نہیں تھی۔ اس لیے مصری حکام نے انہیں فوری طور پر اپنا علاقہ چھوڑنے پر مجبور کردیا۔

عبرانی چینل نے مزید کہا کہ پائلٹوں کے طویل انتظار کے بعد انہیں "قومی سلامتی" کی وجوہات کی بنا پر طیاروں میں واپس آنے کو کہا گیا۔

تاہم اسرائیلی پائلٹوں نے دعویٰ کیا کہ ان کے پاس اتنا ایندھن نہیں ہے کہ وہ اسرائیل واپس جا سکیں لیکن ان کی درخواست کو مسترد کر دیا گیا اور انہیں ایندھن بھرنے کی اجازت نہیں دی گئی۔

اسرائیلی ٹی وی چینل نے بتایا کہ مصریوں نے پائلٹوں کو طیارے میں واپس جانے اور پھر اسرائیل واپس آنے پر مجبور کیا لیکن موسم نے انہیں پرواز مکمل کرنے کی اجازت نہیں دی۔

اسی تناظر میں اسرائیلی وزارت خارجہ نے واقعے کی تصدیق کرتے ہوئے سفارتی ذرائع کے ذریعے کہا کہ واقعہ حقیقی ہے اور اسرائیلی حکام اس معاملے کی تحقیقات کر رہے ہیں۔

مقبول خبریں اہم خبریں