ورچوئل رئیلٹی ٹولزغزہ میں محصورنوجوانوں کے لیے ’’روحانی فرار‘‘کاایک نادرموقع

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size

گذشتہ قریباً ڈیڑھ ایک عشرے سے اسرائیل کے محاصرے کا شکارغزہ میں پہلے ورچوئل رئیلٹی گیمنگ کیفے کا مالک ناکابندی کے تحت پرورش پانے والے نوجوانوں کوایکشن، موسیقی اورکھیلوں کی تصوراتی دنیا سے لطف اندوز ہونے کا موقع پیش کررہا ہے۔

غزہ شہر میں واقع وی آر اسٹیشن کے مالک فراس الخدری کہتے ہیں کہ’’اکثر نوجوان،جو یہاں کھیلنے کے لیے آتے ہیں،وہ اس حقیقت سے ایک طرح سے فرارکی کوشش کرتے ہیں جس میں وہ رہتے ہیں‘‘۔

اسرائیل اورمصر کی جانب سے برسوں کی طویل سرحدی بندش کی وجہ سے زیادہ ترلوگوں کوسفر کے مواقع دستیاب نہیں اور وہ بیرونی دنیا سے کٹے ہوئے ہیں۔ایسے میں آن لائن تفریح نوجوانوں کوذہنی خلفشار سے بچنے کا ایک موقع فراہم کرتی ہے۔

بائیس سالہ یوسف القدیری کا کہنا ہے کہ ’’میں ویڈیو گیمز میں مختلف مقامات، پہاڑوں اور سمندروں میں جاتا ہوں اور ایسے شہروں میں جاتا ہوں ،جہاں جانا ہمارے لیے ناممکن ہے‘‘۔

الخدری کے مطابق ورچوئل ایکشن اورجنگ وجدل والی گیمز نوجوان مردوں میں سب سے زیادہ مقبول ہیں جبکہ خواتین کھیلوں، موسیقی اور سفر کو ترجیح دیتی ہیں۔

سولہ سالہ نسرین شملخ بتاتی ہیں’’چونکہ ہم ناکا بندی کا شکارہیں اور ہمارے لیے سفر کرنا اور ایک جگہ سے دوسری جگہ جانامشکل ہے،لہٰذا ہم وی آراسٹیشن پرآتے ہیں اور ان تمام چیزوں کی تلافی کرنے کی کوشش میں ہم ایک ورچوئل رئیلٹی میں چلے جاتے ہیں‘‘۔

مقبول خبریں اہم خبریں