’’ویکسی نیشن کرائیں ‘‘ سعودی عرب میں موسمی انفلوئنزا سے متعلق انتباہ جاری

موسمی انفلوئنزا ویکسین شدید علامات کے خلاف 80 فیصد تحفظ فراہم کرتی: ڈاکٹر محمد العبد

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
دو منٹ read

سعودی وزارت صحت نے موسمی انفلوئنزا کے حوالے سے ایک نیا الرٹ جاری کردیا۔ وزارت کے ترجمان ڈاکٹر محمد العبد العالی نے وضاحت کی کہ موسمی انفلوئنزا کی ویکسین 80 فیصد تک شدید علامات سے بچاتی ہے۔

انہوں نے کہا کہ ہم سعودی عرب میں موسمی انفلوئنزا کے کیسز میں اضافہ دیکھ رہے ہیں، اور ان دنوں موسمی انفلوئنزا کی سرگرمیاں گزشتہ دو سالوں کے مقابلے میں زیادہ مضبوط ہیں۔ اس لیے کسی کو بھی براہ راست بارش اور سردی کے دھارے کا سامنا نہیں کرنا چاہیے۔

انہوں نے کہا بہت سے لوگ موسمی انفلوئنزا کی وجہ سے انتہائی نگہداشت کے وارڈ میں ہیں اور یہ مرض کسی کی بھی موت کا سبب بن سکتا ہے۔

موسمی انفلوئنزا ویکسین

سعودی وزارت صحت نے حال ہی میں موسمی انفلوئنزا کے خلاف حفاظتی ٹیکے لگانے کے لیے ایک آگاہی مہم کا آغاز کیا تھا ۔ اس مہم کو ’’وہ لمحہ جس کی آپ تمنا کرتے ہیں‘‘ کے نعرے کے تحت چلایا گیا اور اس میں موسمی انفلوئنزا سے سب سے زیادہ متاثر ہونے والے گروہوں کو ہدف بنایا گیا تھا۔ ان گروہوں میں بوڑھے، دائمی بیماریوں کے مریض، کمزور مدافعتی نظام والے افراد، حاملہ خواتین، صحت کے شعبہ کے کارکن اور دیگر برادریاں شامل تھیں۔

ڈاکٹر محمد العبد نے کہا یہ ویکسینیشن محفوظ ہے اور اس کے کوئی مضر اثرات نہیں ہیں۔ اس نے دنیا کے تمام ممالک میں کئی سالوں سے اپنی افادیت کو ثابت کیا ہے۔

وزارت صحت نے مزید کہا کہ انفلوئنزا سے بچاؤ کیلئے ویکسی نیشن کرائی جائے۔ پرہجوم مقامات سے گریز کیا جائے، ہاتھ اچھی طرح دھوئے جائیں، آنکھوں اور منہ سے براہ راست رابطے سے گریز کیا جائے، چھینک یا کھانستے وقت ٹشو پیپرز کا استعمال کیا جائے اور جگہ کی صفائی کو یقینی بنایا جائے۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں