ایندھن مہنگا ہونے کیخلاف احتجاج میں جاں بحق اردنی افسر کرنل الدلابیح کون تھے؟

پبلک لا میں پی ایچ ڈی کی، کئی کتابیں اورمقالے لکھے، 3 بیٹیاں اور ایک بیٹا سوگوار چھوڑا

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
3 منٹس read

کرنل عبد الرزاق الدلابیح 15 مئی 1977 کو پیدا ہوئے تھے۔ اپنی موت سے قبل وہ معان گورنری میں ڈپٹی پولیس آفیسر کے عہدے پر فائز تھے اور پبلک سیکیورٹی میں کرنل کے عہدے پر فائز تھے۔ وہ جرش گورنری میں اپنے خاندان کے ساتھ رہائش پذیر تھے۔ انہوں نے 1996 میں زید بن حارث سکول میں ثانوی مراحل کی تعلیم حاصل کی، 2000 میں مؤتہ یونیورسٹی سے قانون کی تعلیم حاصل کی، اور 2013 سے 2015 تک بین الاقوامی قانون میں ماسٹر ڈگری میں داخلہ لیا۔

کرنل الدلابیح نے پبلک لاء میں پی ایچ ڈی کی ڈگری حاصل کی اور ان کا آخری عہدہ معان گورنریٹ کے ڈپٹی پولیس ڈائریکٹر تھا۔ وہ بہت سے عہدوں پر فائز رہے اور اردن کے پبلک سیکیورٹی ڈائریکٹوریٹ میں مختلف جگہوں پر کام کیا۔

انہوں نے کئی کتابیں اور مقالے بھی لکھے۔ ان کی مشہور کتابوں میں "عالمی فوجداری عدالت کا تزویراتی تناظر" اور "عالمی قانون میں طیارہ ہائی جیکنگ کا جرم" شامل ہیں۔

ان کے مستند جرائد میں مضامین بھی شائع ہوچکے تھے۔ ایسے ہی ایک مضمون ’’کورونا وبا کے دوران انگلش اور سائنس کی ٹیچنگ میں فاصلاتی تعلیم کی حقیقت‘‘ بھی تھا۔

کرنل عبدالرزاق الدلابیح نے 26 فروری 2016 سے 27 فروری 2017 تک دارفور میں اقوام متحدہ کے مشن میں کام کیا۔ وہ پرنس الحسین بن عبداللہ دوم اکیڈمی برائے شہری تحفظ میں ڈپٹی ڈین اور اسسٹنٹ پروفیسر کے عہدے پر بھی فائز رہے۔

کرنل الدلابیح کی شادی 7 جون 2003 میں ہوئی ان کی تین بیٹیاں اور ایک بیٹا ہے۔

آخری پوسٹ

سوشل میڈیا پر سرگرم کارکنوں نے مرحوم کرنل الدلابیح کی جانب سے ان کی سوشل میڈیا کی پوسٹ شیئر کی ہے۔

آخری چیز جو شہید کرنل الدلابیح نے شائع کی وہ ابی البقاء الرندی کی نظم کی نظموں کے اشعار تھے جو اندلس کے لیے نوحہ خوانی میں سے ہیں۔ یہ نظم نے اندلس میں مسلمانوں کی آخری سرزمین کے زوال کے بعد لکھی تھی۔ اس نظم کا پہلا شعر یہ ہے۔

لِكُلِّ شَيْءٍ إِذَا مَا تَمَّ نُقْصَانُ فَلَا يُغَرَّ بِطِيبِ العَيْشِ إنْسَانُ

هِيَ الأمُورُ كَمَا شَاهَدْتُهَا دُوَلٌ مَنْ سَرَّهُ زَمَنٌ سَاءتْهُ أزْمَانُ

ہر چیز کیلئے جب کمی موجودہے تو انسان کی اچھی زندگی کے دھوکے میں مت آنا۔

ان امور کا ملکوں نے مشاہدہ کیا کہ ایک زمانہ خوشی لاتا تو کئی زمانے برے آجاتے۔

اردنی پبلک سیکیورٹی ڈائریکٹوریٹ نے کہا ہے کہ وہ وطن کی حفاظت اور اس کے شہریوں کے تحفظ کے لیے اپنا کام جاری رکھے ہوئے ہے، جو بھی جانوں اور عوامی املاک پر حملہ کرنے کی کوشش کرے گا اور وطن اور وطن کی سلامتی کو خطرے میں ڈالے گا ہم اس کے خلاف آہنی مٹھی سے حملہ کریں گے۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں