پانی کے ٹینک میں 4 گھنٹے رہ کر بچائے جانے والے بچے کے دادا کی گفتگو

بچے کے سکول نہ آنے کی اطلاع پر حیرانی ہوئی، خود سکول جاکر تلاش کرانے کا کہا: عنبر

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
دو منٹ read

پانی کے ٹینک میں 4 گھنٹے رہ کر بچائے جانے والے بچے کے دادا نے اس حوالے سے تفصیلات بتائی ہیں۔ آٹھ سال کے سعودی بچے عنبر الرویلی کے اہل خانہ کو اس کی تلاش کے دوران انتہائی مشکل لمحات سے گزرنا پڑا تھا۔

بچے کے دادا نے البطولی میں سکیورٹی اہلکار حمود الشمری کی کاوش کو بھی سراہا۔ انہوں نے بتایا کہ وہ کیسے سعودی عرب کے مشرق میں واقع الخفجی گورنری میں ایک سکول کے پانی کے ٹینک میں گرنے کے بعد اپنے بچے کو بچانے میں کامیاب ہو گئے۔ داد ا نے ’’العربیہ ڈاٹ نیٹ ‘‘ کو بتایا جب میرا پوتا معمول کے مطابق سکول گیا تو ہمیں اس رپورٹ سے حیرت ہوئی کہ وہ سکول نہیں آیا تھا، جس سے ہمارے خوف میں اضافہ ہوا اور میں نے بچے کی والدہ کے ساتھ سکول جانے کا فیصلہ کرلیا۔

تلاش کا سفر

اپنی بات جاری رکھتے ہوئے انہوں نے کہا سکول کے گارڈ سے پوچھا گیا جس نے جواباً تصدیق کی کہ کوئی بھی طالب علم سکول سے نہیں نکلا ۔ ہم سکول کی پرنسپل کے پاس گئے اور ان سے سکول کے اندر بچے کی تلاش کرنے کو کہا۔ ہم نے سکیورٹی کو حکام کو مطلع کرنے کا فیصلہ کیا کہ وہ ہر جگہ "عنبر" کی تلاش شروع کردیں۔ اس کے بعد سکیورٹی اہلکاروں نے تلاش شروع کی یہاں تک کہ بچہ ٹینک کے اندر سے مل گیا۔

انہوں نے بتایا کہ اس وقت افسر حمود الشمری نے ٹینک میں داخل ہونے کا فیصلہ کیا کیونکہ یہ مکمل طور پر بھرا ہوا نہیں تھا اور ٹینک میں 4 گھنٹے سے زیادہ رہنے کے بعد بچے کو باہر نکال لیا۔

طالب علم کے دادا نے مشرقی علاقے میں محکمہ تعلیم سے مطالبہ کیا کہ وہ اس واقعے کی تحقیقات کرے۔ انہوں نے بچے کی تلاش اور بچانے کی کوششوں کے لیے سکیورٹی اہلکاروں کا شکریہ بھی ادا کیا۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں