ایرانی جوہری ہتھیار علاقائی اور عالمی سطح پر سب سے بڑا ممکنہ خطرہ ہیں: اسرائیل

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
دو منٹ read

اسرائیلی فوج کے چیف آف اسٹاف ایویو کوچاوی نے زور دے کر کہا ہے کہ ایرانی جوہری ہتھیار علاقائی اور عالمی سطح پر سب سے بڑا ممکنہ خطرہ ہیں۔

اسرائیلی نشریاتی ادارے نے منگل کے روز اپنے ایک نشریئے میں کوچاوی کا ایک بیان نقل کیا ہے جس کے مطابق ایویو کوچاوی کا کہنا تھا کہ ایران کا مقابلہ کرنے میں مشرق وسطیٰ میں اس کی تمام پراکسی اور سرگرمیاں شامل ہونی چاہئیں۔ انہوں نے مزید کہا، "ہم ایران کے جوہری ہتھیاروں کا مقابلہ کرنے کے لیے کسی بھی حکم پر عمل درآمد کے لیے تیار ہیں۔"

شام میں میزائلوں کی تنصیب

انہوں نے مزید کہا کہ ہم نے شام میں میزائل نصب کرنے اور گولان کی پہاڑیوں میں حزب اللہ جیسی تنظیم قائم کرنے کی ایران کی کوششوں کو ناکام بنایا۔

انہوں نے مزید کہا کہ یہ اسکیم مکمل طور پر غائب نہیں ہوئی ہے اور اس سلسلے میں ہمیں اور بھی کرنا ہے۔

العربیہ کے ذرائع نے گذشتہ جمعرات کو اطلاع دی کہ اسرائیل نے گذشتہ اتوار کو شام کے القصیر ہوائی اڈے پر حزب اللہ کے ایک فضائی یونٹ کو نشانہ بنایا تھا، جس میں کہا گیا تھا کہ بمباری کا نشانہ بننے والی حزب اللہ کی 127ویں یونٹ لبنان میں ڈرون تیار کرنے کی ذمہ دارہے۔

ذرائع نے مزید کہا کہ شام کا القصیر ہوائی اڈہ ایرانی ڈرونز کے لیے تحقیق اور ترقی کے مرکز میں تبدیل ہو گیا ہے۔

اس میں یہ بھی شامل کیا گیا کہ اسرائیل نے گذشتہ پیر کو شام کے دارالحکومت دمشق کے مرکز میں واقع ایک ایرانی ہیڈکوارٹر پر ایک اور حملہ کیا اور اس بات پر زور دیا کہ ایران اپنی سرگرمیاں دوبارہ شروع کرنے کے لیے شام کے بنیادی ڈھانچے اور رہائشی مقامات کو استعمال کر رہا ہے۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں