نایاب ہونے والی نسل کے متعدد ہرن شہزادہ محمد بن سلمان ریزرو میں منتقل

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
دو منٹ read

سعودی عرب میں نیشنل وائلڈ لائف ڈیولپمنٹ سینٹرنے 20 عربی نسل کے بڑے ہرن، 30 ریم ہرن اور 10 جنگلی ہرن شہزادہ محمد بن سلمان رائل ریزرو میں پری ریلیز سائٹس پر منتقل کرنے کی تیاری کر رہا ہے۔

سعودی عرب کے نیشنل سینٹر فار وائلڈ لائف ڈویلپمنٹ نے اپنے ’ٹویٹر‘ اکاؤنٹ کے ذریعے بتایا کہ یہ طریقہ کاراسے ریزرو کے جنگلی رینج میں میں رکھنے پیش کیا گیا ہے، جوشمال مغربی سعودی میں نیوم پروجیکٹ اور بحیرہ احمر کے پروجیکٹ کے درمیان واقع ہے۔

یہ ریزرو ان چھ شاہی ذخائر میں سے ایک ہے جو جون 2018 میں شاہی حکم کے ذریعے قائم کیے گئے تھے۔ اس کا انتظام قانونی شخصیت اور مالی اور انتظامی آزادی کے ساتھ ایک بورڈ آف ڈائریکٹرز کرتا ہے جس کی سربراہی ولی عہد شہزادہ محمد بن سلمان کرتے ہیں۔

جانوروں کی آبادکاری

جنگلی حیات کے تحفظ کے لیے کام کرنے والےادارے "رحمۃ" ایسوسی ایشن فار اینیمل ویلفیئر کے ترجمان حمزہ الغامدی نے ’العربیہ ڈاٹ نیٹ‘ کو بتایا سعودی عرب بہت سے جنگلی جانوروں کو آباد کرنے کے لیے سنجیدہ کوششیں کر رہا ہے اور یہ مملکت کے وژن 2030 کو عملی شکل دینے کی کوششوں کا حصہ ہے جس کا مقصد سعودی عرب میں ماحولیات کی ترقی اور پائیداری کے تصور کو فروغ دیا۔

انہوں نے مزید کہا آج ہم نیشنل سنٹر فار وائلڈ لائف ڈویلپمنٹ کی تیاری کو دیکھتے ہیں۔ یہ مرکزناپید ہونے والے متعدد جنگلی جانوروں سعودی عرب میں قدرتی ماحول میں تحفظ دینا ہے۔ عربی ہرن بھی ان جانوروں میں شامل ہیں جن کی نسلیں معدودم ہوتی جا رہی رہیں۔

انہوں نے کہا کہ ہم آج دیکھ رہے ہیں کہ مرکزعربی اوریکس، الریم ہرن اور ادمی ہرن کو پرنس محمد بن سلمان رائل سنٹر میں عارضی طور پر چھوڑ رہا ہے اور نسبتاً کنٹرول شدہ ماحول میں ان کی نگرانی کر رہا ہے۔ یہ مرکز قدرتی ماحول میں جانوروں کو رکھ کران کی افزائش نسل کے لیے کوشاں ہے۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں