ماضی میں پاسداران انقلاب کے ناقد احمدی نژاد نے اب کیوں خاموش ہیں؟

احمد نژاد کے قریب رہنے والے اور بعد میں منحرف ہونے والے عباس امیری نے وجوہات بتائیں

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
6 منٹس read

سابق ایرانی صدر محمود احمدی نژاد نے حالیہ برسوں میں حکومت اور ایرانی پاسداران انقلاب کو تنقید کا نشانہ بنانے کے لیے سخت ترین الفاظ استعمال کئے ہیں حتی کہ ایک مرتبہ انہوں نے پاسداران انقلاب کو "سمگلنگ برادرز" کے طور پر بیان کیا جس سے اس کے حکومت کنٹرول سے الگ ہوکر درآمدات اور برآمدات میں ملوث ہونے کی طرف اشارہ تھا۔

ایسی واضح تنقید کے بعد حالیہ احتجاجی تحریک میں پاسداران انقلاب کی کارروائیوں پر انہوں نے اچانک خاموشی اختیار کر لی ہے۔ انہوں نے ملک میں چوتھے مہینے سے جاری مظاہروں کو مسترد کرنے یا ان کی حمایت کرنے سے متعلق بھی کوئی بیان نہیں دیا۔

اس صورتحال نے "انصاف نیوز" ویب سائٹ کو ایسے تمام لوگوں کی خاموشی کی وجوہات تلاش کرنے پر آمادہ کیا جو اس سے قبل تمام ملکی مسائل پر اپنے موقف کا اعلان کر رہے تھے اور انتہا پسندانہ مؤقف کا اظہار کر رہے تھے۔

اسی تناظر میں بنیاد پرست شخصیات میں سے ایک عباس امیری فر پہلے احمدی نژاد کے قریب تھے اور بعد میں ان سے منحرف ہو گئے تھے سے بات چیت کی گئی۔

نظر بندی کا خوف اور مفاد تشخیصی کونسل میں سیٹ کا لالچ

امیری فر کہتے ہیں کہ میں نے کئی سالوں سے احمدی نژاد کے ساتھ بات چیت نہیں کی ہے لیکن میں جانتا ہوں کہ جب وہ اس پر نظر بندی کی توقع رکھتے تھے اور اس کے انتظار میں تھے کہ وہ نظام کے مفاد کی تشخیصی کونسل کی نشست حاصل کریں تو انہوں نے سیاسی قوتوں سے بات کی کے وہ کسی بھی طرح بغاوت سے متعلق کوئی پوزیشن نہ لیں۔ حکومت کے حق نہ ہی مخالفت میں کوئی بھی پوزیشن نہ لی جائے۔

میری رائے میں احمدی نژاد سمجھتے ہیں کہ ان کے لیے اگلے صدارتی اجلاس میں یا اس سے پہلے پارلیمانی انتخابات کے لیے الیکشن میں آنا مناسب ہے۔

احمدی نژاد کی ٹیم نظام اور رہنما پر یقین نہیں رکھتی

جب "انصاف نیوز" نے ان سے پوچھا: "کیا آپ کا مطلب یہ ہے کہ انہوں نے یہ موقف اس لیے لیا کہ وہ خارج نہ ہوں اور ایکسپیڈینسی کونسل میں اپنی موجودہ پوزیشن سے محروم نہ ہوں؟" انہوں نے زور دے کر کہا کہ ہاں، درحقیقت یہ ان کی پالیسی ہے۔ وہ نظام اور رہنما پر بالکل یقین نہیں رکھتے۔ ان کے پاس انتخابات کے لیے ایک منصوبہ ہے۔ پارلیمانی انتخابات کے لیے ان کے پاس خاموش منصوبہ ہے۔ وہ اپنی پوری طاقت کے ساتھ ایوان صدر میں داخل ہونا چاہتے ہیں۔ احمدی نژاد سمجھتے ہیں کہ یہ حکومت ناکام ہو جائے گی۔

احمدی نژاد کی طرف سے مظاہرین کی حمایت کا اعلان کرنے کی صورت میں عباس امیر نے کہا کہ مظاہرین کی حمایت کر کے بھی احمدی نژاد ان کی حمایت حاصل نہیں کر سکتے۔ مظاہرین ان پر حملہ کریں گے۔ احمدی نژاد موجودہ حالات میں مجرموں میں سے ہیں۔ احمدی نژاد کی ٹیم اگر مظاہرین کی حمایت کرے گی تو ان کی گرفتاری اور ان کے دفاتر پر حملوں میں آسانی ہو جائے گی۔

اور اصلاح کرنے والوں کا کیا ہوگا؟

اس انٹرویو میں "عامری فر " نے احتجاج پر اصلاح پسند تحریک کے موقف کا حوالہ دیا اور اس تحریک کو "فسادی" سے تعبیر کیا، انھوں نے کہا: "حکومت پر ان کی بہت سی تنقیدوں کے باوجود اصلاح پسندوں نے بھی اس کے خلاف موقف اختیار کیا۔

مظاہرین کا مقابلہ کیسے کیا جائے؟ اس حوالے سے عباس امیری فہر نے احمدی نژاد کی ٹیم کے حوالے سے بتایا کہ احمدی نژاد مظاہروں کے خاتمے کا انتظار کر رہے ہیں تاکہ وہ اپنے عہدوں کا اعلان کریں اور اسی احتجاجی لہر پر سوار ہوکر اپنی تحریک بڑھائیں۔ چونکہ پارلیمانی انتخابات قریب ہیں اس لیے ہر کوئی مظاہرین کے کچھ حصے کو اپنی طرف متوجہ کرنے کے لیے بولے گا یا تنقید کرے گا۔ مجھے یقین ہے کہ احمدی نژاد اور ان کی ٹیم فسادات کے خاتمے کے ساتھ باہر نکلنے کا راستہ تلاش کر رہی ہے۔

انہوں نے مزید کہا: "احمدی نژاد کی ٹیم کی اجتماعی رائے یہ ہے کہ لوگ اب اصلاح پسندوں یا بنیاد پرستوں کی طرف رجحان نہیں رکھتے، بلکہ وہ تیسری لائن کی تلاش میں ہیں اور ہم تیسری لائن ہیں، اس لیے لوگ ہماری طرف جھکیں گے۔"

عباس امیری نے آخر میں کہا احمدی نژاد کسی کی نہیں سنیں گے، وہ صرف اپنے مفادات کے لیے خاموش ہیں ورنہ وہ مٹا دیے جائیں گے اور ہمیشہ کے لیے ختم بھی کر دیے جائیں گے۔ اس لیے انھوں نے اپنے آپ سے کہا کہ وہ خاموش رہیں تاکہ اس معمولی امید کو برقرار رکھا جا سکے ۔

اعتدال کی چادر اوڑھنے کی کوشش

اسی تناظر میں ویب سائٹ ’’دی مانیٹر‘‘ نے احمدی نژاد کے مؤقف پر روشنی ڈالی اور لکھا: 16 ستمبر کو ایران میں داخلی مظاہروں کے آغاز کے بعد سے سابق صدر محمود احمدی نژاد کی خاموشی بہت دلچسپ ہے۔ 2013 میں اپنی مدت ختم ہونے کے بعد احمدی نژاد نے محتاط انداز میں قدم اٹھاتے ہوئے کہا اپنے لئے ایک نئی عوامی تصویر پینٹ کرنے کی کوشش کی ہے اس کے لئے انہوں نے لبرل پالیسی، مفاہمت پر مبنی خارجہ پالیسی اور خواتین کے حقوق کے بارے میں روادارانہ خیالات کو اپنانا شروع کیا ہے۔

انسٹی ٹیوٹ فار نیو لائنز فار پالیسیز اینڈ سٹریٹیجیز میں تجزیاتی ترقی کے ڈائریکٹر کامران بخاری نے بتایا کہ احمدی نژاد اعتدال پسندی کی چادر اوڑھنے کی کوشش کر رہے ہیں، لیکن ساتھ ہی انہیں احساس ہے کہ وہ حکومت کے خلاف بغاوت نہیں کر سکتے۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں