عرب لیگ کی ٹوئٹر اور فیس بک پر اسرائیل کو بے نقاب کرنے کے لیے مہم

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
دو منٹ read

عرب لیگ کے مواصلاتی شعبے نے سماجی رابطوں کی ویب سائٹس "ٹوئٹر" اور "فیس بک" کے ذریعے جنرل سیکرٹریٹ کے آفیشل پیجز پر فلسطین کی حمایت میں مہم شروع کی ہے۔

اس مہم کا مقصد اسرائیل کی جانب سے فلسطینیوں کے بنیادی حقوق اور عالمی قوانین کی خلاف ورزیوں اور یروشلم کو یہودی ریاست کا حصہ بنانے کی کوششوں کو بے نقاب کرنا ہے۔

یہ مہم " القدس استقامت اور ترقی" کے عنوان سے اعلیٰ سطحی بین الاقوامی کانفرنس کی مناسبت سے شروع کی گئی ہے، جو کہ کل اتوار کی صبح عرب لیگ کے زیر اہتمام منعقد ہوگی۔

مہم کے تحت روزانہ شام 6:00 اور 8:00 بجے سوشل میڈیا پر مواد پوسٹ کیا جائے گا ۔ مہم جمعے کی شام سے شروع ہوگی اور آئندہ بدھ تک جاری رہے گی۔

اس مہم کی پہلی اشاعت "میرے بچے اسکول سے لوٹے اور انہیں اپنا گھر نہیں ملا" کے عنوان سے پوسٹ کی گئی ایک ویڈیو ہے جو فلسطینی شہری علی طعمہ کے گھر کے انہدام کی کہانی سے متعلق ہے۔

جاری مہم کے منشور میں کہا گیا ہے کہ یروشلم پر قبضے کے بعد سے اسرائیلی حکام منظم طریقے سے 5000 سے زائد فلسطینیوں کے مکانات کو غیر مجاز تعمیرات کے بہانے مسمار کر رہے ہیں، جب کہ فلسطینی شہریوں کی جانب سے 95 فیصد سے زائد بلڈنگ پرمٹ درخواستوں کو مسترد کر دیا گیا ہے۔

1967 میں یروشلم شہر پر قبضے کے بعد سے اسرائیل نے تمام بین الاقوامی، انسانی اصولوں اور معاہدوں خصوصا چوتھے جنیوا کنونشن کی خلاف ورزی کرتے ہوئے شہر کو یہودی ریاست کا حصہ بنانے ، فلسطینی آبادی کے انخلا اور ان کی جگہ یہودی آباد کاروں کو آباد کرنے کے لیے درجنوں نسلی امتیاز پر مبنی قوانین نافذ کیے ہیں۔

اس لیے القدس شہر اور اس کے شہریوں کو نشانہ بنانے والی جارحانہ اور منظم اسرائیلی پالیسیوں اور کاروائیوں کے مقابلے میں مقبوضہ بیت المقدس کے عوام کی ثابت قدمی کی حمایت کے لیے الجزائر میں عرب سربراہی اجلاس نے ایک اعلیٰ سطحی کانفرنس کے انعقاد کی منظوری دی ہے۔

کانفرنس میں ریاست فلسطین کے دارالحکومت مقبوضہ بیت المقدس کی حفاظت اور اس کے عوام کی ثابت قدمی کی حمایت کے لیے عملی سیاسی و قانونی ذرائع اور طریقہ کار زیر غور آئیں گے۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں