مغربی کنارے میں اسرائیلی فوج کی فائرنگ فلسطینی بچہ شہید

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
1 منٹ read

کل اتوار کو فلسطینی وزارت صحت نے اعلان کیا کہ مغربی کنارے میں جنین پناہ گزین کیمپ پر چھاپے کے دوران اسرائیلی فوج کی فائرنگ سے ایک فلسطینی بچہ شہید اور کم سے کم تین دیگر زخمی ہوگئے۔

وزارت صحت نے ایک بیان میں کہا کہ "بچہ قصی رضوان واکد جس کی عمر 14 سال ہے پیٹ میں زندہ گولیاں لگنے سے شدید زخموں کے نتیجے میں شہید ہو گیا"۔

اسرائیلی فوج نے ایک بیان میں کہا ہے کہ جنین کیمپ میں فوجی کارروائی میں قیدی زکریا الزبیدی کے بھائی جبریل الزبیدی کو نشانہ بنایا گیا، جس پر اسرائیل حملوں کی منصوبہ بندی کا الزام لگاتا ہے۔ اسے حراست میں لے لیا ہے۔ الزبیدی پرالزام عاید کیا جاتا ہے کہ اس نے چند ہفتے قبل جنین میں ایک ہلاک ہونے والے اسرائیلی کی لاش اغوا کرلی تھی۔ بعد ازاں فلسطینی اتھارٹی کی مداخلت سے یہودی آباد کار کی لاش واپس کی گئی تھی۔

فوج نے کہا کہ فلسطینی بندوق برداروں نے فوجیوں پر فائرنگ کی۔ اس دوران فائرنگ کا تبادلہ ہوا۔ ہمیں اطلاع ملی کہ فائرنگ کے تبادلے کے دوران متعدد بندوق بردار زخمی ہوئے۔

جنین کے نائب گورنر کمال ابو الرب نے بتایا کہ "اسرائیلی فوج نے دوپہر کے وقت کیمپ پر دھاوا بول دیا اور جبریل الزبیدی کو گرفتار کرلیا گیا۔ اس آپریشن میں تین فلسطینی زخمی اور ایک نوجوان شہید ہوگیا۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں