ایران پر حملے کو غلط کہنے کا بیان ’’فضول ‘‘ ہے: اسرائیلی وزیر اعظم

بین الاقوامی ایٹمی توانائی ایجنسی کے ڈائریکٹر جنرل رافیل گروسی کے بیان کو مسترد کیا گیا

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
دو منٹ read

اسرائیل نے بین الاقوامی ایٹمی توانائی ایجنسی کے ڈائریکٹر جنرل رافیل گروسی کے بیانات کو مسترد کر دیا۔ گروسی نے کہا کہ ایرانی جوہری تنصیبات پر کوئی بھی اسرائیلی یا امریکی حملہ غیر قانونی ہو گا۔ اسرائیلی وزیر اعظم نیتن یاھو نے ان بیانات کو "فضول" قرار دے دیا۔

ایران اور عالمی طاقتوں کے درمیان 2015 کے جوہری معاہدے کی تجدید کے سلسلے میں تعطل کا شکار مذاکرات کو آسان بنانے کی کوشش میں ہفتہ کے روز تہران کے دورے کے دوران گروسی نے کہا کہ جوہری تنصیبات پر کوئی بھی فوجی حملہ ممنوع ہے۔

گروسی نے یہ تبصرہ ایک صحافی کے سوال کے جواب میں کیا۔ سوال میں پوچھا گیا تھا کہ اگر وہ سمجھتے ہیں کہ ایران کو ایٹم بم حاصل کرنے سے روکنے کے لیے سفارتی ذرائع ختم ہو چکے ہیں تو اسرائیل اور امریکہ کی جانب سے ایرانی جوہری تنصیبات پر حملے کی دھمکیاں دی گئی ہیں۔ اسرائیلی وزیر اعظم نیتن یاہو نے اتوار کے روز ٹی وی پر نشر ریمارکس میں کہا ’’رافیل گروسی ایک قابل قدر شخص ہے جس نے بے قیمت بیان دیا ہے‘‘

نیتن یاہو نے پوچھا کہ کسی بھی قانون کے تحت غیر قانونی؟ کیا ایران، جو کھلے عام ہماری تباہی کا مطالبہ کرتا ہے، ہماری تباہی کے لیے اوزار تیار کرنا جائز ہے؟ کیا ہمیں اپنے دفاع سے منع کیا گیا ہے؟ یقیناً ہمیں ایسا کرنے کی اجازت ہے۔

گروسی کے  دورہ ایران کی ایک تصویر
گروسی کے دورہ ایران کی ایک تصویر

بین الاقوامی جوہری توانائی ایجنسی نے ہفتے کے روز کہا کہ گروسی کو ایران کی طرف سے وسیع پیمانے پر یقین دہانیاں موصول ہوئی ہیں کہ وہ غیر اعلانیہ مقامات پر پائے جانے والے یورینیم کے ذرات کے بارے میں طویل عرصے سے تعطل کا شکار ہونے والی تحقیقات میں تعاون کرے گا اور ہٹائے گئے مانیٹرنگ ڈیوائسز کو دوبارہ انسٹال کرے گا۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں