میری ٹائم ٹیکنالوجی بہتر بنانے کے لیے سعودی عرب کا عالمی بحریہ کے ساتھ معاہدہ

سمندری ماحول اور قدرتی وسائل کے تحفظ کے لیے جدید ٹیکنالوجی کو اپنانا ضروری ہے

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
دو منٹ read

سعودی جنرل ٹرانسپورٹ اتھارٹی کے قائم مقام چیئرمین ڈاکٹر رمیح بن محمد الرمیح نے لندن میں انٹرنیشنل میری ٹائم آرگنائزیشن کے سیکرٹری جنرل کے ساتھ تنظیم کے منصوبے ’’ آئی ایم او کیرز‘‘ کی حمایت کے لیے معاہدے پر دستخط کردیے ہیں۔ اس معاہدے کا مقصد یہ ہے کہ سعودی عرب سمندری شعبے میں جدید ٹیکنالوجی کو فعال کرنے اور دنیا میں ٹیکنالوجی کی ترقی میں معاونت کے لیے بین الاقوامی کوششوں کی حمایت کرے گا۔

سعودی پریس ایجنسی کے مطابق اس پروجیکٹ کا مقصد مشترکہ کام کو بڑھانا اور بین الاقوامی میری ٹائم آرگنائزیشن کے ساتھ مشترکہ کوششوں کی حمایت کرنا ہے تاکہ ایک سبز سمندری مستقبل اور ایک نیلی معیشت تک پہنچا جا سکے اور ترقی پذیر ممالک کی اس طرح مدد کی جائے جس سے سمندری ترقی میں اضافہ ہو ۔ تنظیم کے رکن ممالک کے لیے استعداد کار میں اضافہ ہو پروجیکٹ کے مقاصد میں جدید ٹیکنالوجی پر انحصار کرنے والی زیادہ پائیدار مستقبل تک رسائی حاصل کرنا اور سمندری ماحول اور قدرتی وسائل کے تحفظ میں معاون بننا بھی شامل ہے۔

اس پروجیکٹ میں ایک عالمی میرین ٹیکنالوجی ہیکاتھون، ایک سائنسی کانفرنس، خصوصی ورکشاپس، میرین ٹیکنالوجیز میں جدت پر تحقیق اور مطالعہ، ا سی طرح وقتاً فوقتاً خبروں اور سمندری شعبے کی حقیقت پر رپورٹس شامل ہیں۔ سعودی عرب کی یہ کوششیں اس سلسلے میں بین الاقوامی کوششوں کے مطابق نقل و حمل اور لاجسٹک خدمات کے لیے قومی حکمت عملی کی توسیع کے طور پر سامنے آئی ہیں۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں