عراق نے شام کے ساتھ سرحد پر منشیات کی بھاری مقدار قبضے میں لے لی

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
دو منٹ read

کل ہفتے کے روز عراق نے شام کے ساتھ سرحد پر منشیات کیپٹاگون کی تیس لاکھ سے زیادہ گولیاں ضبط کرنے کا اعلان کیا ہے۔ یہ ایک قسم کی ایمفیٹامین محرک ہے جس کی سمگلنگ مشرق وسطیٰ میں گزشتہ برسوں میں ڈرامائی طور پر بڑھی ہے۔

عراقی بارڈر کراسنگ اتھارٹی کے ایک بیان کے مطابق یہ منشیات سیب کے ڈبوں کے اندر چھپائی گئی تھی۔ منشیات کی یہ کھیپ سرحد شہر القائم کی کراسنگ پر قبضے میں لی گئی۔ شہرمغربی عراق کے صوبہ الانبار کو شامی صوبے دیر الزور سے ملاتا ہے۔ .

حالیہ مہینوں میں عراقی حکام نے منشیات کی اسمگلنگ کی کاروائیوں کو ناکام بنایا ہے۔ عراق، جس کی سرحدیں 4 ممالک کے ساتھ ہیں، خود کوکیپٹاگون کی اسمگلنگ کے لیے ایک کراسنگ پوائنٹ سمجھتا ہے۔

عراقی بارڈر پورٹس اتھارٹی نے اپنے بیان میں اعلان کیا کہ "ایک بڑی مقدار (نشہ آور گولیاں) ضبط کر لی گئی ہیں، جس کی مقدار مختلف اقسام کی 30 لاکھ سے زیادہ گولیاں ہیں، جو ایک ریفریجریٹر کے اندر لدی ہوئی سیب کے پھلوں کے ڈبوں کے اندر چھپائی گئی تھیں۔" بیان میں مزید کہا گیا ہے کہ ڈرائیور کو گرفتار کر لیا گیا ہے۔

منشیات کا مسئلہ عراق میں ایک سنگین چیلنج بن گیا ہے، جہاں حالیہ برسوں میں منشیات کی اسمگلنگ اور غلط استعمال میں اضافہ ہوا ہے۔

سنہ 2021 کے آخر میں وزارت داخلہ میں انسداد منشیات یونٹ نے اعلان کیااکہ جنوبی عراق میں بصرہ اور میسان کی گورنریاں منشیات کی تجارت اور غلط استعمال کے معاملے میں ملک میں پہلے نمبر پر آگئی ہیں۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں