’’فلسطینی عوام خیالی اختراع ہے‘‘، اسرائیلی وزیر کا فلسطینی عوام کے وجود سے انکار

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
دو منٹ read

اسرائیلی وزیر خزانہ بتسلائیل سموتریچ نے فلسطینی عوام کے وجود کی تردید کرتے ہوئے کہا کہ "فلسطینی عوام جیسی کوئی چیز نہیں ہے، یہ ایک خیالی اختراع ہے جو 100 سال سے زیادہ پرانی نہیں ہے"۔

انتہا پسند وزیر نے اس سے قبل حوارہ میں تشدد کی کارروائیوں کے بعد قصبے کو صفحہ ہستی سے "مٹانے" کا مطالبہ کیا تھا۔

اسرائیلی اخبار "دی یروشلم پوسٹ" کے مطابق انتہائی دائیں بازو کی "مذہبی صیہونیت" پارٹی کے سربراہ سموتریچ نے یہ بات فرانس کے دارالحکومت پیرس میں ایک تقریب سے خطاب کے دوران کہی۔ انہیں فرانس میں بنیاد پرست صیہونی کارکن اور لیکود پارٹی کے سابق سربراہ جیکیوس کُپفر کے اعزاز میں ایک شام میں شرکت کے لیے پیرس مدعو کیا گیا تھا۔

فرانس میں "لیگ فار ہیومن رائٹس" سمیت دیگر حلقوں نے اسرائیلی وزیر کے پیرس کے دورے پر تنقید کی ہے۔

گذشتہ فروری کے آخر میں، مقبوضہ مغربی کنارے کے فلسطینی قصبے حوارہ پر آباد کاروں کے حملوں کے بعد، سموتریچ نے حوارہ قصبے کو مٹانے کا مطالبہ کیا تھا، اس کے نتیجے میں ایک فلسطینی ہلاک، درجنوں دیگر زخمی ہوئے اور علاقے میں فائرنگ سے دو آباد کاروں کی ہلاکت کے بعد درجنوں فلسطینی گھروں اور کاروں کو جلایا اور تباہ کر دیا گیا۔

رواں سال مغربی کنارے میں اسرائیلی کارروائیوں میں غیر معمولی اضافہ دیکھنے میں آیا جس کے نتیجے میں 17 بچوں، ایک خاتون اور ایک قیدی سمیت 89 فلسطینی مارے گئے۔دوسری جانب الگ الگ کارروائیوں میں 14 اسرائیلی مارے گئے۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں