وزیر انصاف نے اسرائیل کو خانہ جنگی کے دہانے پر لا کھڑا کیا ہے: لیکوڈ پارٹی

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size

عدالتی نظام میں اصلاحات کی خاطر کی جانے والی قانونی ترامیم کو مسترد کرنے کی وجہ سے اسرائیلی وزیر دفاع یواف گیلنٹ کو ان کے عہدے سے برطرف کیے جانے کے اعلان کے بعد اسرائیل کے اندر غم وغصے کی فضا میں وزیر انصاف یاریو لیون نے دھمکی دی ہے کہ اگر وزیر اعظم بنجمن نیتن یاہو نے عدالتی ترامیم واپس لیں تو وہ مستعفی ہو جائیں گے۔ مؤخر الذکر کا کہنا ہے کہ انہیں عدالتی ترامیم کو واپس لینے کے لیے متعصبانہ دباؤ کا سامنا ہے۔

دوسری جانب اسرائیل کے عبرانی چینل 12 کے مطابق حکمران لیکوڈ پارٹی کے عہدیداروں نے کہا ہے کہ وزیر انصاف لا پروا ہیں اور ملک کو آگ میں جھونکنے کی کوشش کر رہے ہیں۔ ان کا مزید کہنا تھا کہ "وزیر انصاف نے ملک کو خانہ جنگی کے دہانے پر لا کھڑا کیا ہے اور انہیں مستعفی ہو جانا چاہیے۔" چینل 12 نے یہ بھی اشارہ کیا کہ فوج نے اسرائیل کے اندر کنٹرول کھونے کے بعد ملک میں الرٹ کی حالت بڑھا دی ہے۔

برطرفی .. اور پہلا بیان

العربیہ/الحدث کے نامہ نگار کے مطابق یہ پیش رفت اس وقت سامنے آئی ہے جب اسرائیلی وزیر اعظم بنجمن نیتن یاہو نے اتوار کے روز وزیر دفاع یواف گیلنٹ کو عدالتی ترامیم کو مسترد کرنے کی وجہ سے عہدے سے برطرف کر دیا تھا۔

مقامی میڈیا نے یہ بھی اطلاع دی ہے کہ نیتن یاہو نے وزیر دفاع کو برطرفی سے قبل طلب کیا، اور ان سے کہا کہ وہ ان پر سے اعتماد کھو چکے ہیں کیونکہ انہوں نے حکومت اور حکمران اتحاد کے خلاف کام کیا تھا۔

ان کی برطرفی کے بعد اپنے پہلے بیان میں اخبار (دی یروشلم پوسٹ) نے گیلنٹ کا حوالہ دیتے ہوئے کہا کہ "ریاست اسرائیل کی سلامتی میری زندگی کا مشن تھا اور ہمیشہ رہے گا۔"

برطرف وزیر دفاع نے حال ہی میں اسرائیلی عدالتی نظام میں ترمیم کے نیتن یاہو کے متنازعہ منصوبے کی مخالفت کی تھی۔ ہفتے کے روز انہوں نے مخالفین کے ساتھ بات چیت کے لیے عدالتی ترامیم سے متعلق قانون سازی کو روکنے کا مطالبہ کیا اور انتباہ کیا کہ اس سے فوج میں تقسیم اور پھوٹ پیدا ہو سکتی ہے۔ انہوں نے کہا کہ ہمیں عدالتی نظام میں تبدیلی کی ضرورت ہے، لیکن بنیادی تبدیلیاں بات چیت کے ذریعے کی جانی چاہئیں۔

مقبول خبریں اہم خبریں