حوثی جنگجو نے بچے کواٹھا کر بے دردی کے ساتھ زمین پر پٹخ ڈالا:ویڈیو

حوثی شدت پسند کا نہتے بچے پروحشیانہ تشدد، سوشل میڈیا پرمجرمانہ واقعے کی شدید مذمت

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
دو منٹ read

یمن کے دارالحکومت صنعاء میں میں حوثی ملیشیا کی طرف سے ایک نیا غیر انسانی واقعہ سامنے آیا ہے۔ حوثی جنگجو نے ایک بچے کو اٹھا کر زمین پر پٹخ ڈالا۔ اس واقعے کی ویڈیو سوشل میڈیا پر وائرل ہو رہی ہے جس پرسماجی رابطوں کی طرف سے سخت رد عمل سامنے آیا ہے۔

ویڈیو میں دیکھا جا سکتا ہے کہ ایک ایک بازار میں مقرر حوثی سپر وائزر ایک بچے کو اٹھا کر زمین پر پٹخ رہا ہے۔ یہ ویڈیو سوشل میڈیا پر جنگل کی آگ کی طرح پھیل گئی۔ اس پر عوامی اور سماجی حلقوں کی طرف سے سخت رد عمل سامنے آیا ہے۔

تفصیلات کے مطابق تشدد کا نشانہ بننے والا بچہ ایک پھل فروش کا بیٹا ہے۔ مقامی میڈیا کے مطابق حوثی شدت پسند کچھ دیگر مسلح اہلکاروں کے ہمراہ بچے کے باپ کی سبزیوں اور پھلوں کی دکان پرآیا۔ اسے بلیک میل کرنے کی کوشش کی تو بچے نے حوثی جنگجو کی اس حرکت پر اعتراض کیا۔ اس پر حوثی شدت پسند نے اس کے والد کو تشدد کا نشانہ بنانے کےساتھ بچے کو اٹھا کر زمین پر پٹخ ڈالا۔

معلوم ہوا کہ حملہ آور دارالحکومت کے سیکرٹریٹ میں پبلک ورکس آفس میں کام کرتا ہے اور اس نے بچے کے اہل خانہ اور صنعاء کے علاقے دارالسلام میں بچے کو چھڑانے کے لیے جمع ہونے والے شہریوں کو ڈرانے کے لیے فائرنگ کی۔

انسانی حقوق کی مسلسل پامالیاں

قابل ذکر ہے کہ انسانی حقوق کی کئی تنظیموں نے اس سے قبل حوثی ملیشیا کے زیر کنٹرول علاقوں میں عام شہریوں کو درپیش خلاف ورزیوں پر تنقید کی تھی۔

یمن کے لیے امریکا کے خصوصی ایلچی ٹِم لینڈرکنگ نے بھی حال ہی میں دارالحکومت صنعا میں مقیم یمنیوں کو حوثیوں کی خلاف ورزیوں اور ہراساں کیے جانے پربات کرتےہوئے صنعاء میں یمنیوں کے لیے امریکا کی حمایت کا اظہار کیا تھا۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں