سعودی عرب کی جانب سے مخلتف ممالک میں افطار پروگرام جاری

اردن، بوسنیا ہرزیگوینیا، انڈونیشیا اور مالدیپ میں سعودی وزارت مذہبی امور کے زیراہتمام افطار پروگرامات

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
دو منٹ read

اردن ، بوسنیا اور انڈونیشیا میں افطار پروگرام کے بعد سعودی عرب کی وزات مذہبی امور و دعوت و ارشاد نے حسب روایت مالدیپ کے دارالحکومت مالے کے اسلامی سینٹر میں افطار پروگرام کا آغاز کیا ہے۔

سعودی عرب کے سرکاری خبررساں ادارے ایس پی اے کے مطابق اس موقع پر مالدیپ کے وزیر مملکت برائے اسلامی امور انیل محمد ، مالدپ میں متعین سعودی سفیر مترک الدوسری، انڈیا میں مذہبی اتاشی بدر العنزی اور متعدد اسلامی شخصیات موجود تھیں۔

سعودی سفیر نے اس موقع پر خطاب کرتے ہوئے کہا کہ ’افطار پروگرام متعدد ملکوں میں رمضان کے دوران شاہ سلمان بن عبدالعزیز کی جانب سے شروع کیے جانے والے منصوبے کا ایک حصہ ہے‘۔

انہوں نے کہا کہ’ مالدیپ میں سات ہزارافراد کو افطار پروگرام میں شامل کیا جائے گا۔ ضرورت مند خاندانوں میں افطار راشن بھی تقسیم کیا جارہا ہے‘۔

مالدیپ میں اسلامی انجمنوں اورمراکز کے ذمہ داران نے افطار پروگرام پر سعودی حکومت کا شکریہ ادا کیا ہے۔

قبل ازیں سعودی عرب نے بوسنیا اور ہرزیگوینا میں رمضان کے دوران کھجور اور افطار تقسیم کرنے کا پروگرام شروع کیا ہے۔

سرکاری خبر رساں ایجنسی ایس پی اے کے مطابق اس انیشیٹو کا آغاز سعودی وزارت اسلامی امور و دعوت و رہنمائی نے سراجیوو میں سعودی سفارت خانے میں کیا۔

سعودی وزارت اسلامی امور و دعوت و رہنمائی نے انڈونیشیا میں قرآن کے نسخے اور کھجور کی تقسیم کے لیے شاہ سلمان گفٹ پروگرام کے ساتھ ساتھ افطار پروگرام کا افتتاح کیا ہے۔

یہ تقریب سعودی سفیر فیصل بن عبداللہ العمودی، مملکت کے مذہبی اتاشی ڈاکٹر احمد بن علی الحزمی اور کئی سینئیر اسلامی شخصیات کی موجودگی میں جکارتہ میں اتاشی کے ہیڈ کوارٹر میں ہوئی۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں