سعودی عرب میں غیر ملکیوں کے ملکیتی مویشی اور اونٹ پانچ ماہ میں مملکت سے نکالنے کاحکم

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
دو منٹ read

سعودی عرب کی وزارت ماحولیات، پانی اور زراعت نے غیر سعودیوں کی ملکیت والے اونٹوں اور مویشیوں کے مالکان کو یاد دہانی کرائی ہے کہ وہ مویشیوں کو اپنے ملکوں میں لے جانے کے لیے دی گئی مدت کو سامنے رکھیں اور اگلے پانچ ماہ کے اندر اندر مویشیوں کو اپنے ملکوں میں لے جائیں۔

سعودی پریس ایجنسی کے مطابق وزارت زراعت نے غیرسعودی ملکیت کے حامل اونٹوں اور دوسرے مویشیوں کے مالکان اور چراہوں سے کہا ہے کہ وہ مویشیوں کو ان کے ملکوں میں لےجانے کے لیے دی گئی مدت کےاندر اندر مویشی لے جائیں۔

وزارت نے زور دیا کہ یہ اس سال اگست کے آخر میں یہ ڈیڈ لائن ختم ہوجائے گی۔ اس حکم نامے پرعمل درآمد نہ کرنے والے چرواہوں اور مویشیوں کے مالکان کے خلاف اقدامات کیے جائیں گے۔ ان کے ملک میں داخلے کے تمام اجازت نامے منسوخ کردیے جائیں گے، تولیدی شرح کے حساب کتاب کو منسوخ کردیا جائے گا۔ اونٹوں اور زندہ مویشیوں کو چرنے کے لیے برآمد کرنے کا نیا طریقہ کار لاگو کیا جائے گا۔

وزارت زراعت نے کہا کہ یہ اقدامات ماحولیاتی نظام اور رینج لینڈز کے لیے قومی حکمت عملی کی خاطر پودوں کے احاطہ کو محفوظ رکھنے کی کوششوں کا حصہ ہے۔ ان طرح کے اقدامات کا مقصد ماحول کو محفوظ رکھنے اور مملکت میں چراگاہوں کے تحفظ کے ساتھ ساتھ جنگلات کو درپیش خطرات کو کم کرنا ہے۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں