یمن میں امن مذاکرات کے لیے حالات سازگار ہیں: خلیج تعاون کونسل

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
دو منٹ read

خلیج تعاون کونسل کے سیکرٹری جنرل جاسم البدیوی نے کہا ہے کہ یمن میں سیاسی حل تک پہنچنے کے لیے امن مذاکرات میں شامل ہونے کے لیے موجودہ حالات "سازگار" ہیں۔

منگل کو اپنے ایک بیان میں جاسم البدیوی نے کہا کہ صفوں کے اتحاد اور یمن کے اعلیٰ ترین مفاد کو برقرار رکھنے کے جذبہ سے ہی امن، سلامتی اور استحکام سے لطف اندوز ہوا جا سکتا ہے۔


گزشتہ اتوار کو یمن کے لیے اقوام متحدہ کے ایلچی ہانس گرنڈبرگ نے خبردار کیا تھا کہ یمن کو ایک نازک وقت کا سامنا ہے۔ انہوں نے تنازع کے مستقل خاتمے کا مطالبہ کیا تھا۔

سویڈن کے سفارت کار نے یہ بھی کہا تھا کہ اقوام متحدہ کی ثالثی سے 2 اپریل 2022 کو ہونے والی جنگ بندی ایک امید کا لمحہ ہے۔ یاد رہے کہ اقوام متحدہ کی ثالثی میں جنگ بندی معاہدہ اکتوبر میں ختم ہوچکا تاہم اس کے باوجود جنگ بندی بڑی حد تک قائم ہے۔

انہوں نے اس بات پر زور دیا کہ خطرات اب بھی بہت زیادہ ہیں۔ جنگ بندی کے ثمرات کے تحفظ اور اس پر مزید انسانی اقدامات کرتے ہوئے ایک ملک گیر جنگ بندی قائم کی جائے۔ اس وقت ایک پائیدار سیاسی تصفیہ تک پہنچنے کی ضرورت ہے۔

واضح رہے اقوام متحدہ نے 2 اگست 2022 کو اعلان کیا تھا کہ یمنی فریقوں نے سابقہ شرائط کے مطابق ہی 2 اگست سے 2 اکتوبر 2022 تک جنگ بندی کی مدت میں مزید دو ماہ کی توسیع پر اتفاق کیا ہے۔ تاہم، یہ توسیع گزشتہ اکتوبر 2022 میں ختم ہو گئی تھی۔ یمنی فریقین ابھی تک اس کی تجدید کے لیے کسی معاہدے پر نہیں پہنچے ہیں۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں