ایران کا وزارت دفاع کے کمپلیکس پر ڈرون حملہ ناکام بنانے کا دعویٰ

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
دو منٹ read

ایران نے دعویٰ کیا ہے کہ تہران نے ملک کے وسط میں اصفہان میں وزارت دفاع کے کمپلیکس پر کل رات ایک ڈرون حملے کو ناکام بنا دیا ہے۔

نیم سرکاری خبر رساں ادارے تسنیم کے مطابق حکام کا کہنا ہے کہ ڈرون کو وزارت دفاع کے کمپلیکس کے سامنے مار گرایا گیا۔

وزارت دفاع نے بتایا کہ ناکام حملے میں وزارت سے وابستہ "امیر المومنین کمپلیکس کو ایک چھوٹے ڈرون کے ذریعے نشانہ بنانے کی کوشش کی گئی، لیکن دفاعی نظام نے اسے مار گرایا۔ خبر رساں ایجنسی کےمطابق اس کارروائی میں سکیورٹی سائٹ کو کوئی نقصان نہیں پہنچا۔ "

گذشتہ حملے

گٓذشتہ ماہ فروری 2023 میں اصفہان کے قریب ایک فوجی فیکٹری پر بھی ڈرون حملہ کیا گیا تھا۔

ایران اپنےہاں ہونے والے حملوں پر اکثر وبیشتر اسرائیل کو مورود الزام ٹھہراتا ہے۔ دونوں ملکوں کے درمیان طویل عرصے سے خفیہ جنگ چل رہی ہے۔

دریں اثنا تہران نے اسرائیل کی طرف انگلی اٹھائی، جو اس وقت دونوں فریقوں کے درمیان طویل مدتی چھپی جنگ کی تازہ ترین قسط معلوم ہوتی تھی۔

اصفہان کے عسکری کملیکس میں ڈرون حملے سے ہونے والی تباہی [اے ایف پی]
اصفہان کے عسکری کملیکس میں ڈرون حملے سے ہونے والی تباہی [اے ایف پی]

تل ابیب نے اکثر ایرانی اہداف پر حملہ کرنےکا اعتراف کیا ہے۔ اسرائیل کا کہنا ہے کہ اگر سفارت کاری تہران کے جوہری یا میزائل پروگراموں کو محدود کرنے میں ناکام رہتی ہے تو اسرائیل ایران کے جوہری پروگرام کے خلاف فوجی کارروائی کرسکتا ہے۔

قابل ذکر ہے کہ صوبہ اصفہان میں بہت سے جوہری مقامات واقع ہیں جن میں نطنز کمپلیکس بھی شامل ہے جو کہ ملک کے یورینیم افزودگی کے پروگرام کا مرکز ہے جسے 2021 میں ڈرون حملوں سے نقصان پہنچایا گیا تھا۔

گذشتہ چند برسوں کے دوران ایران میں متعدد فوجی، جوہری اور صنعتی مقامات کے ارد گرد متعدد دھماکے اور ان میں آتش زدگی کے واقعات ہو چکے ہیں۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں