شام اور اسد

شام کی عرب لیگ میں واپسی کے امکانات پرغور کے لیے جمعہ کو جدہ میں اجلاس طلب

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
دو منٹ read

منگل کو خلیج تعاون کونسل نے شام کی عرب لیگ میں واپسی کے امکان پر بات چیت کے لیے ایک اجلاس طلب کیا ہے۔

یہ اجلاس جمعے کو سعودی عرب کے شہر جدہ میں ہوگا جس میں خلیج تعاون کونسل کے ممالک مصر، اردن اور عراق کے وزرائے خارجہ شرکت کریں گے۔

درایں اثناء دوحہ نے منگل کو اعلان کیا کہ اسے خلیج تعاون کونسل کے جنرل سیکرٹریٹ کی طرف سے اگلے جمعہ کو جدہ میں ہونے والے اجلاس میں شرکت کی دعوت ملی ہے، جس میں شام کی عرب لیگ میں واپسی کے امکان پر تبادلہ خیال کیا جائے گا۔

گذشتہ دو مہینوں میں شام کے صدر بشار الاسد نے سلطنت عمان اور متحدہ عرب امارات کا دورہ کیا تھا۔ سنہ 2011 میں شامی تنازعہ شروع ہونے کے بعد دو عرب ممالک کے پہلے دورے میں، شام کی عرب لیگ میں واپسی امکانات پر بات چیت کی گئی تھی۔

شام کے صدر بشار الاسد
شام کے صدر بشار الاسد

شام میں تنازعہ شروع ہونے کے بعد کئی عرب ممالک خصوصاً خلیجی ممالک نے شام کے ساتھ اپنے سفارتی تعلقات منقطع کر لیے تھے، دمشق میں اپنے سفارت خانے بند کر دیے اور عرب ممالک کی لیگ نے شام کی رکنیت معطل کر دی تھی۔

تونس کے ایوان صدر نے 3 اپریل کو بتایاتھا کہ تونس کے صدر قیس سعید نے وزیر خارجہ نبیل عمار کو دمشق میں اپنے ملک کے لیے سفیر مقرر کرنے کے لیے طریقہ کار وضع کرنے کی ہدایت کی تھی۔ایوان صدر نے ایک بیان میں اعلان کیا کہ سعید نے عمار کے ساتھ ملاقات کے دوران زور دیا کہ "تونس کی سفارت کاری کی خارجہ پالیسی کے اصولوں پر عمل پیرا ہونے کی ضرورت ہے، جن میں سے سب سے اہم کسی محور میں شامل نہ ہونا اور قومی آزادی کو برقرار رکھنا ہے۔"

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں