یمن میں قید رہنے والے سعودی شہری کا خاندان کی طرف سے جذباتی استقبال

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size

یمن میں حوثیوں کی قید میں رہنے والے ایک سعودی شہری کی رہائی کے بعد اس کی وطن واپسی پر آبائی شہر جازان میں اس کے خاندان اور اقارب کی طرف سے جذبات استقبال کیا گیا۔

سعودی شہری کی شناخت ظاہر نہیں کی گئی تاہم اس کے خاندان سے ملاپ کے جذباتی منظر کی ایک ویڈیو سوشل میڈیا پر وائرل ہے جسے شہریوں کی طرف سے بے حد سراہا گیا ہے اور شہری کی رہائی پراس کے خاندان کومبارک باد پیش کی ہے۔

دل کو چھو لینے والے منظرمیں رہائی پانے والے سعودی شہری کو اپنے اہل خانہ سے ملتے دیکھا جا سکتا ہے جب کہ ملاقات کے موقعے پر اس کے اہل خانہ کی آنکھوں سے آنسو آگئے۔ قید میں رہنےوالے نوجوان نے اپنی ماں کی قدم بوسی کی جب کہ ماں نے اسے گلے لگایا اور ماں نے اپنے لخت جگر کے پیشانی پر بوسہ دیا۔

قیدیوں کے تبادلے کا یہ قدم یمنی حکومت اور حوثی باغیوں کے درمیان 880 سے زائد قیدیوں کے تبادلے کے معاہدے کے بعد سامنے آیا ہے، جو جنگ کے خاتمے کی کوششوں میں تیزی کے ساتھ امید کی ایک نئی علامت ہے۔

خیال رہے کہ حال ہی میں سعودی عرب اور یمن میں حوثی ملیشیا کے درمیان قیدیوں کے تبادلے کا ایک معاہدہ طے پایا جس میں دونوں طرف سے درجنوں افراد کی رہائی عمل میں لائی گئی۔

یمن کی آئینی حکومت کی وفادار اتحادی افواج کے سرکاری ترجمان بریگیڈیئر جنرل ترکی المالکی نے اتحادی افواج کے یمن سے رہائی پانے والے19 قیدیوں کو وصول کیا جن میں 16 سعودی شہری اور تین سوڈانی باشندے تھے۔ اس کے علاوہ سعودی عرب سے اڑھائی سو قیدیوں کو ابھا کے ہوائی اڈے سے یمن روانہ کیا گیا۔

مقبول خبریں اہم خبریں