امیر کویت نے 2020 کی قومی اسمبلی تحلیل کردی، الیکشن کرانے کا فیصلہ

مارچ میں آئینی عدالت نے 2022 کے قومی اسمبلی الیکشن کو کالعدم قرار دیا اور 2020 میں منتخب پارلیمنٹ کو بحال کیا تھا

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size

پیر کو کویت کے ولی عہد شیخ مشعل الاحمد الجابر الصباح نے 2020 کی قومی اسمبلی کو تحلیل کرنے کا اعلان کردیا۔ اس اسمبلی کو مارچ میں آئینی عدالت کے فیصلے کے ذریعے ایک آئینی حل کے طور پر بحال کیا گیا تھا۔ اس بحالی کے لیے آئین کے آرٹیکل 107 کا سہارا لیا گیا تھا۔

یہ بات کویت کے ولی عہد نے کویت کے امیر شیخ نواف الاحمد الجابر الصباح کی جانب سے رمضان المبارک کے آخری عشرہ کے موقع پر خطاب کرتے ہوئے بتائی ۔

کویت کے ولی عہد شیخ مشعل الاحمد الجابر الصباح
کویت کے ولی عہد شیخ مشعل الاحمد الجابر الصباح

کویت کے ولی عہد نے خطاب میں کہا کہ ہمیں جو ذمہ داری سونپی گئی ہے اس کی بنیاد پر ہم ریاستی اداروں کے اقدامات پر دلچسپی سے عمل کرتے ہیں اور ہم رہنمائی اور مشورے قبول کرتے اور رہنمائی فراہم کرتے ہیں۔ تاہم ان دنوں یہ بات ہمیں تکلیف دیتی ہے کہ شہریوں کو تکلیف ہو رہی ہے۔ سیاسی منظر نامہ اضطراب کا احساسات لیے ہوئے ہے اور اس میں کوئی تبدیلی نہیں آرہی۔

انہوں نے مزید کہا کہ موجودہ سیاسی منظر نامے کے اثرات سے نکلنے کے لیے ہمیں آئین کی طرف رجوع کرنے کی ضرورت ہے۔ عوام کی طرف جانے اور ان کی خواہشات کو عملی جامہ پہنانے کی ضرورت ہے۔ ہم نے عوام کی مرضی سے حکمرانی کو مضبوط کرنے ریاست کے وقار کا تحفظ کرنے کو اختیار کیا ہے۔ آئین سے تجاوز نہ کرنے کو اختیار کیا ہے۔

انہوں نے وضاحت کی کہ مذکورہ بالا تمام چیزوں کو ترتیب دینے اور آئین کو مدنظر رکھتے ہوئے اور عوامی مرضی کا احترام کرتے ہوئے ہم نے 2020 کی قومی اسمبلی کو تحلیل کرنے کا فیصلہ کیا ہے جسے آئینی عدالت کے حکم سے بحال کیا گیا تھا جو ایک آئینی حل پر مبنی تھا۔ ہم آنے والے مہینوں میں عام انتخابات کی بھی اپیل کر رہے ہیں۔ واضح رہے مارچ میں آئینی عدالت نے 2022 کے قومی اسمبلی کے انتخابات کو کالعدم قرار دینے اور 2020 میں منتخب پارلیمنٹ کو بحال کرنے کا فیصلہ سنایا تھا۔

مقبول خبریں اہم خبریں