غیر معمولی صورتحال: سعودی علاقے ’’ وادی الرمہ‘‘ میں سال میں دوسری مرتبہ پانی آگیا

اس سال غیر معمولی بارشیں ہوئیں، پانی کا بہاؤ عقلۃ الصقور، وادی ساحوق اور الدوامی سے شروع ہوکر وادی الرمہ تک پہنچتا

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
3 منٹس read

سعودی وادیوں کی سردار "وادی الرمہ " اس سال غیر معمولی صورتحال سامنے آئی ہے۔ اس سال زیادہ بارشیں ہونے سے وادی الرمہ میں سال میں دوسری مرتبہ پانی آگیا اور سیلاب کی صورتحال پیدا ہوگئی ۔ القصیم کے علاقے میں البدایا، الخبراء اور الرس کے درمیان’’ وادی النساء‘‘ تک پانی پہنچ گیا۔ وادی میں پانی کا بہاؤ تاریخ میں ریکارڈ ہونے والے نادر واقعات میں سے ہے۔ تحقیق کے مطابق کئی سالوں سے یہاں کبھی ایسا نہیں ہوا تھا۔ یہ جزیرہ نما عرب کی سب سے بڑی، طویل اور مشہور وادی ہے۔ یہ واحد وادی ہے جو مغرب سے مشرق تک پہنچتی ہے۔ اسے سعودی عرب میں قدرتی مظاہر میں سے ایک سمجھا جاتا ہے۔

طوفانی بہاؤ کا نایاب تکرار

القصیم یونیورسٹی میں موسمیات کے سابق پروفیسر نے ایک ٹویٹ میں موسم اور موسمیاتی سوسائٹی کے نائب صدر ڈاکٹر عبداللہ المسند کے حوالے سے بتایا گیا کہ انہوں نے اس کے بالائی طاس میں القصیم کے مغرب میں وادی الرمہ کے بہاؤ کا حوالہ دیا ہے۔ انہوں نے ایک بارش کے موسم میں ایک سے زیادہ مرتبہ پانی کے آنے کی بات کی ہے۔ اور یہ حالیہ برسوں میں دہرایا گیا ہے۔ بعض اوقات وادی کا سیلاب اپنے سب سے نچلے یا اس سے بھی درمیانی طاس تک پہنچنے سے پہلے رک جاتا ہے۔

یہ پانی کا بہاؤ القصیم کے مشرق میں ’’نفود الثویرات‘‘ کی چوٹی پر اپنی بلندیوں سے محیرہ تک مکمل بہاؤ میں ہے۔ اس لیے کہا جاتا ہے کہ وادی الرمہ بہہ پڑا ہے۔ تاریخی ریکارڈ کے مطابق ایسا 1376، 1402، 1429، 1440 اور 1444 میں ہوا ہے۔

القصیم یونیورسٹی کے سابق پروفیسر نے مزید کہا کہ مجھے کوئی تاریخی ماخذ نہیں ملا جس سے یہ معلوم ہو کہ وادی الرمّہ بعد کی صدیوں میں ایک ہی موسم میں دو مرتبہ بہا ہو۔ اس کا مطلب یہ نہیں ہے کہ ایسا نہیں ہواشاید ایسا ہوا اور ہم تک منتقل نہیں ہوا۔

محقق ڈاکٹر خالد الزعاق نے کہا ہے کہ اس سے قبل برسات کے زمانے میں یہ وادی حجاز کی بلندیوں سے شط العرب تک بہتی ہوئی ندی کی مانند تھی اور صحرائی دور میں اس کے اعضا ریت کے باعث کٹ جاتے تھے۔ تو یہ 3 حصوں میں بدل گئی اور وادی الربہ ، وادی الاجردی، اور وادی الباطن کے نام سے تین وادیاں بن گئیں۔

الزعاق نے ایک ویڈیو کلپ میں مزید کہا کہ اب ہم اس بات پر پختہ یقین رکھتے ہیں کہ اس سال کے لیے وادی الرمہ کا بہاؤ 1402 ہجری کے مقابلے میں زیادہ مضبوط ہے۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں