ایران کے اعلیٰ مذہبی عہدیدار آیت اللہ سلیمانی کے قتل کی ویڈیو جاری

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
دو منٹ read

ایران کے سرکردہ مذہبی رہ نما اور سپریم لیڈر آیت اللہ علی خامنہ ای کے سابق مندوب اور ایران کی شورائے خبرگان (مجلس خبرگان رہبری) کے رکن عباس علی سلیمانی کے قتل کی ویڈیو فوٹیج مقامی میڈیا پر گردش کر رہی ہے۔

ایران کی نیم سرکاری خبر رساں ایجنسی ’تسنیم‘ نے قتل کا ایک ویڈیو کلپ نشر کیا ہے جس میں ایک بندوق بردار سیدھے سلیمانی کی طرف جانے سے پہلے تھوڑا سا آگے بڑھتا ہوا نظر آیا اور صفر کے فاصلے سے ان پر پیچھے سے گولی چلا دی۔

ایران کے سرکاری ذرائع ابلاغ نے بدھ کو کہا ہے کہ ملک کی طاقتور مذہبی شخصیت اور رہبر اعلیٰ کا انتخاب کرنے والے ماہرین کی کمیٹی کے رکن آیت اللہ عباس علی سلیمانی مسلح حملے میں قتل کر دیے گئے ہیں۔

فرانسیسی خبر رساں ادارے اے ایف پی کے مطابق ایرانی نیوز ایجنسی ارنا نے ایک سرکاری عہدے دار کے حوالے سے رپورٹ کیا ہے کہ ’آج صبح ایک مسلح حملے میں آیت اللہ عباس علی سلیمانی کی موت واقع ہو گئی ہے۔ حملہ آور کو گرفتار کر لیا گیا۔‘

آية الله سليماني
آية الله سليماني

ایرانی نیوز ایجنسی نے مزید بتایا ہے کہ مذہبی شخصیت پر حملہ ملک کے شمالی صوبے مازندران کے شہر بابلسر میں کیا گیا۔

ارنا نیوز ایجنسی نے مازندران صوبے کے ایک سکیورٹی اور سیاسی عہدے دار کے حوالے سے بتایا، ’آیت اللہ عباس علی سلیمانی آج صبح ایک مسلح حملے میں قتل کر دیے گئے ۔۔۔ حملہ آور کو گرفتار کر لیا گیا ہے اور اس سے پوچھ گچھ ہو رہی ہے۔

آية الله سليماني
آية الله سليماني

عہدے دار کے مطابق حملہ ایک بینک میں ہوا۔ انہوں نے بتایا، ’حملہ آور کا محرک ابھی واضح نہیں ہے، جو سامنے آنے پر بتا دیا جائے گا۔‘

مازندران کے گورنر محمود حسینی پور نے کا کہ حملہ آور بینک کا مقامی سکیورٹی اہلکار تھا۔

انہوں نے ٹیلی ویژن پر کہا، ’ابھی تک ہماری معلومات اور کاغذات ظاہر کرتے ہیں کہ یہ سکیورٹی یا دہشت گردی کا معاملہ نہیں تھا۔‘

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں