فلسطین میں بھوکے شیرنےچڑیا گھر میں کم سن بچے کو مار ڈالا

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
دو منٹ read

فلسطین کے علاقے غزہ کی پٹی میں میں خان یونس کےمقام پر ایک چڑیا گھر میں ایک شیرنے بچے کو مار ڈالا۔

بچے کی خالہ حمدہ نضال اقطیط نے اس سانحے کی تفصیلات بیان کیں۔ اس نے عمون نیوز ایجنسی کو بتایا کہ وہ سرکاری انداز میں چڑیا گھر میں داخل ہوئے۔ دروازے پر ایک شخص کھڑا تھا جو ہم سے پیسے لے رہا تھا۔ اس دوران بچہ اندر گیا جو شیر کا شکار ہوگیا۔

باڑ مکمل طور پر محفوظ نہیں تھی

نضادل نے کہا کہ "ہم پارک میں داخل ہوئے اور ایک ایسا جانور دیکھا۔ پھر ہم شیر کے پہلو میں چلے گئے۔ شیرسب سے پہلے سو گیا، پھر وہ صحت مند اور غیر فطری طور پر مشتعل ہوا اور میرے پاس اس کی دستاویزی ویڈیوز موجود ہیں۔"

تاہم اس نے مزید کہا کہ شیر کے اردگرد کی باڑ مکمل طور پر محفوظ نہیں تھی۔ سوراخ ایک دوسرے سے اتنے دور تھے کہ کوئی بھی بچہ باڑ سے اس کا ہاتھ اندر داخل کر سکتا تھا۔

"بھوکا شیر"

دکھی دل کے ساتھ بات کرتے ہوئے انہوں کہا کہ شیر نے بچے پرایسے حملہ کیا جیسے اس نے کچھ کھایا نہیں۔ جانور نے بچے کو پکڑ لیاپارک میں جوانوں کے علاوہ کوئی نہیں تھا۔ صرفوہی شخص تھا جو چڑیا گھر کے گیٹ پر کھڑا رقم وصول کر رہا تھا۔

انہوں نے چیخ پکارکی شیر کی کہ کوئی ان کی بچے کو شیر کے جبڑوں سے آزاد کرنے میں اس کی مدد کرے تقریباً آدھے گھنٹے تک کوئی نہیں آیا۔ اس دوران شیر بچے کو بری طرح چیر پھاڑ چکا تھا۔

قابل ذکر ہے کہ پولیس کے ترجمان ایمن البتنجی نے ایک بیان میں کہا ہے کہ "بچہ شیر کے پنجرے کے گرد حفاظتی حصار کے اندر چڑھ گیا اور اس کے ایک سوراخ کے قریب پہنچا، جس کی وجہ سے وہ شیر کا شکار ہوگیا۔" انہوں نے مزید کہا کہ اس واقعے جی تحقیقات شروع کردی گئی ہیں۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں