سعودی خلا بازوں کی کشش ثقل میں 14 تجربات کرنے کی تیاری

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
3 منٹس read

سعودی سپیس اتھارٹی نے بین الاقوامی خلائی سٹیشن کے مشن کے لیے سعودی خلابازوں کی تیاری کی تصدیق کردی ہے

ان خلا بازوں کو اس سال 2023 عیسوی کی دوسری سہ ماہی میں لانچ کرنے کا منصوبہ ہے۔ پرواز کے لیے 9 ماہ تک تربیتی پروگرام مکمل کرنے کے بعد انہیں بھیجا جائے گا۔

اتھارٹی نے کہا کہ دونوں سعودی خلابازوں نے کامیابی سے تربیت کا دورانیہ مکمل کر لیا اور قرنطینہ مدت میں داخل ہو گئے۔ سائنسی مشن کو خلا میں مقررہ وقت پر روانہ کرنے کی تیاری ہے۔

خلاباز ریانا برناوی اور علی القرنی بین الاقوامی خلائی سٹیشن (آئی ایس ایس) کے لیے روانہ ہوں گے۔مشن کا مقصد خلائی پرواز کے دوران مائیکرو گریوٹی ماحول میں 14 اہم سائنسی تحقیقی تجربات کرنا ہے۔ ان تجربات میں تین تعلیمی اور نگرانی کے تجربات شامل ہیں سعودی خلاباز پروگرام خلا کے میدان میں مملکت کے وژن 2030 کے مقاصد کے تحت سعودی عزائم کو حاصل کرتا ہے۔

خلاباز علی القرنی
خلاباز علی القرنی

اتھارٹی نے اعلان کیا کہ عملے نے خلا میں 12 دن گزارنے کی نقالی کرلی ہے۔ جہاں زمین کے ماحول سے نکلنے کے نقلی تجربات کیے گئے۔ کشش ثقل کی قوتوں اور سرعت کے ساتھ اس کے اثر کی نقل کی گئی۔ انسانی جسم پر کشش ثقل کی بھاری کھینچ کے اثرات کا تجربہ حاصل کیا گیا۔ انہوں نے بین الاقوامی خلائی سٹیشن پر مشن کو مکمل کرنے کے لیے درکار آلات اور طریقہ کار کی بھی تربیت لے لی۔ یہ آلات کمپنی ’’ ایگزیم سپیسژذذ اور ’’سپیس ایکس‘‘ کے ہیں۔ نیشنل ایروناٹکس اینڈ اسپیس ایڈمنسٹریشن (NASTAR) کی سہولت پنسلوانیا میں ایک جدید ترین فلائٹ سمیلیٹر ہے۔

انہوں نے وضاحت کی کہ خلابازوں نے بین الاقوامی خلائی سٹیشن کے ماحول کی تقلید کے لیے (HERA) پروگرام کے ایک حصے کے طور پر ناسا کے جانسن سنٹر میں تربیت حاصل کی۔ اس مشن کے مقاصد کی بنیاد پر طلبہ اور خلائی سائنس میں دلچسپی رکھنے والوں کی حوصلہ افزائی ہوگی۔ ایگزیم سپیس تعلیمی پروگرام کے طلبہ کو آگاہی پریزنٹیشن دی گئی۔

سعودی خلائی اتھارٹی نے یہ بھی وضاحت کی کہ تربیتی پروگرام میں گزشتہ ستمبر میں کیلیفورنیا کے ہاؤتھورن میں واقع "سپیس ایکس" کمپنی کے ہیڈکوارٹر میں خلابازوں کو کھوج کی مہارتوں کی تربیت بھی شامل تھی۔ خلابازوں نے بین الاقوامی سٹیشن پر پروگراموں اور آپریشنل آپریشنز میں بھی تربیت حاصل کی۔ اس تربیت کا مقصد خلائی مرکز میں کئی تربیتی پروگرام منعقد کرنا بھی تھا۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں