سوڈان میں لوٹ مار کے دوران وضو میں مصروف بزرگ کی ویڈیو وائرل

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size

سوڈان میں جاری خانہ جنگی کے دوران بڑے پیمانے پر املاک کی لوٹ مار کی اطلاعات آ رہی ہیں۔ اس حوالے سے میڈیا میں کچھ تفصیلات ویڈیوز اور تصاویر کی شکل میں پہنچی ہیں۔ ایسی ہی تازہ ویڈیو میں خرطوم کی لیبیا مارکیٹ میں ایک لوٹ مار کے دوران ایک بزرگ شہری کو نماز کے لیے وضو کرتے اور لوٹ مار کے واقعات سے بے پرواہ دکھایا گیا ہے۔

ایک دل کو چھو لینے والے منظر میں ایک شخص وضو کر رہا ہے جب کہ لوٹ مار اور چوری نے خرطوم کے مشہور بازار کو تل پٹ کررکھا ہے۔

یہ فوٹیج سوشل میڈیا پر جنگل کی آگ کی طرح پھیلی اور اس پر ملا جلا رد عمل سامنے آیا ہے۔ بعض صارفین نے بزرگ کے نیکی کے کام کی تعریف کی جب بعض کا کہنا ہے کہ بزرگ کو لوگوں کو لوٹ مار سے روکنے کی کوشش کرنا چاہیے تھے۔

"حرام حرام ہی رہتا ہے"

سوشل میڈیا پر وائرل کلپ پر تبصرہ کرنے والوں میں سے ایک صارف نے کہا کہ "حرام حرام ہی رہتا ہے، چاہے ہر کوئی کرے، اپنے اصولوں کو نہ چھوڑیں کیونکہ آپ اکیلے ہی جوابدہ ہوں گے’’۔

ایک اور لکھاری نے فیس بک پر تبصرہ کیا کہ "جب سب لیبیا کے بازار میں جوتوں کی دکانیں لوٹ رہے تھے وہ اکیلے ہی فرض نماز کی ادائیگی کے لیے وضو کر رہا تھا جس طرح یہ زمین کانٹوں میں پھول اگاتی ہے، اسی طرح تم جیسے ہزاروں لوگ اس وطن کے ستون بن کر اگیں گے جو ہم ہر روز خواب دیکھتے ہیں۔"

لیبیا کی مارکیٹ کہاں واقع ہے؟!

قابل ذکر ہے کہ سوڈان کے دارالحکومت خرطوم میں "لیبیا مارکیٹ" خرطوم کی مغربی سمت میں ام درمان شہر کے مضافات میں واقع ہے اور اسے خرطوم اور سوڈان کی مشہور اور بڑی مارکیٹوں میں سے ایک سمجھا جاتا ہے۔

یہ تجارتی سامان جیسے ٹیکسٹائل، جوتے، برقی آلات، فرنیچر، خوراک اور مشروبات کے علاوہ ریئل اسٹیٹ، گاڑیوں اور اسپیئر پارٹس کی بھی مرکزی منڈی ہے۔

مارکیٹ عام طور پر خرید و فروخت کے معمول کے کاموں کے علاوہ مقامی اور ہارڈ کرنسیوں میں بڑے تجارتی سودوں کا ،رکز ہے اور اس میں تھوک اور پرچون دونوں طرح کا کاروبار ہوتا ہے۔

تاہم گذشتہ چند دنوں کے دوران یہ مارکیٹ بڑے پیمانے پر لوٹ مار کےاوپن تھیٹر میں تبدیل ہوگئی اور لوٹ مار کا سلسلہ کل جمعہ کو بھی دیکھا گیا۔

مقبول خبریں اہم خبریں