کیا ہم جلد میسی کو سعودی عرب میں دیکھیں گے؟ الھلال کلب کا پہلا ردعمل آگیا

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
دو منٹ read

گزشتہ ہفتے پیرس سینٹ جرمین کے سٹرائیکر لیونل میسی کا نام سعودی پروفیشنل لیگ میں ’’الھلال کلب‘‘ کے کھلاڑیوں کی صفوں میں شامل ہونے کے حوالے سے رپورٹس گردش کرتی رہیں ہیں۔ تاہم اب پہلی مرتبہ اس حوالے سے ’’ الھلال کلب‘‘ کا اپنا رد عمل سامنے آگیا ہے۔

سعودی کلب الہلال نے بتایا ہے کہ ہم لیونل میسی کو اپنی ٹیم میں شامل کرنے کے خواہش مند ہیں تاہم اس کے باوجود ارجنٹائنی سٹار کے ساتھ ابھی تک کسی قسم کا معاہدہ نہیں کیا گیا ہے۔

کلب نے مزید کہا کہ جو کچھ بھی ہو رہا ہے وہ مذاکرات کے علاوہ کچھ نہیں ہے۔ جمعہ کی شام ہسپانوی اخبار "منڈو ڈیپورٹیو" نے شمولیت کے حوالے سے بات کی تھی۔ یہ پیش رفت ایک ایسے وقت میں ہوئی ہے جب ایک طے شدہ منتقلی کے معاہدے کے وجود کی وسیع پیمانے پر تصدیق ہو رہی تھی۔

ایک باخبر ذریعہ نے گزشتہ منگل کو اطلاع دی تھی کہ میسی کی سعودی عرب منتقلی کا معاہدہ "پہلے ہی ہو چکا ہے"۔ 35 سالہ کھلاڑی معاہدے پر دستخط کرنے سے پہلے آخری تفصیلات کو حتمی شکل دے رہے ہیں۔ اے ایف پی کے مطابق بعد میں میسی کے والد سامنے آگئے اور انہوں نے ایسے کسی معاہدے کی تردید کردی تھی۔

یاد رہے سعودی عرب نے گزشتہ سال اس وقت میسی کو سیاحت کا سفیر مقرر کیا تھا جب انہوں نے ٹھیک ایک سال قبل جدہ کا دورہ کیا تھا۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں