کینیڈین ایئر لائنز نے سعودی خاتون ڈاکٹر کا شکریہ کیوں ادا کیا؟

بلڈ پریشر کی کمی سے مسافر گر کر بے ہوش ہوگیا، ڈاکٹر ‘‘ اوراد’’ نے ہنگامی سروسز فراہم کردیں

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size

ایک کینیڈین ایئرلائنز نے سعودی خاتون ڈاکٹر ‘‘ أوراد محمد رضا نصر الله ’’ کا شکریہ ادا کیا ہے۔ یہ شکریہ اس بنا پر کیا گیا ہے سعودی ڈاکٹر نے ایک پرواز کے دوران انسانی ہمدردی کی بنا پر ہنگامی سروسز فراہم کرکے ایک مسافر کو بچانے میں کردار ادا کیا تھا۔ طیارے میں سوار یہ مسافر بے ہوگیا تھا۔

ڈاکٹر "اوراد" نے ‘‘ العربیہ ڈاٹ نیٹ’’ کو کینیڈا کے طیارے میں پیش آنے والے واقعہ کی تفصیل سے آگاہ کیا اور کہا میں کینیڈا کی پرواز میں سوار تھی جب عملے نے ایک مریض کو بچانے میں مدد کے لیے طبی پس منظر کے حامل کسی شخص سے مدد کی درخواست کی۔ یہ مریض دوران پرواز بیمار ہوگیا تھا۔ میں نے ان کی درخواست پر لبیک کہا۔ مسافر مریض کا بلڈ پریشر کم ہوگیا تھا۔ اسی فوری طبی سہولت فراہم کی گئی اور وہ بتدریج ٹھیک ہوتا گیا۔ ہمیں پرواز کے دوران رکنے کی ضرورت نہیں تھی۔ طیارے میں موجود کینیڈین عملے کا زمینی سروسز میں موجود طبی عملے سے رابطہ کیا گیا اور علاج کے منصوبے کی منظوری دی گئی۔

انہوں نے بتایا کہ کینیڈین طیارے کا عملے نے مدد فراہم کرنے پر میرا شکریہ ادا کیا۔ سٹاف نے مدد کرنے کے میرے خیال کا خیر مقدم کیا۔ پرواز کے اختتام پرمیرا خصوصی شکریہ ادا کیا گیا۔ ایئر کینیڈا کی جانب سے بعد میں مجھے ای میل بھیج گئی جس میں اٹینڈنٹ، فلائٹ کے عملہ اور مریض کی جانب سے میرا خصوصی شکریہ ادا کیا گیا تھا۔

ڈاکٹر اوراد اپنے ایک اعزاز کے ساتھ
ڈاکٹر اوراد اپنے ایک اعزاز کے ساتھ

‘‘ اوراد‘‘ نے بتایا کہ انہوں نے ایک مرتبہ جرمن ایئر لائنز کی پرواز میں بھی اس وقت مدد فراہم کی تھی جب ایک مسافر نے چیخ ماری تھی۔ ایسا لگ رہا تھا کہ مسافر کا بیٹا موت کے منہ میں چلا گیا ہے۔ تاہم اس وقت میرے پاس کوئی چارہ نہیں تھا کہ میڈیکل عملے کے آنے سے قبل ہی مدد فراہم کرنا شروع کردوں۔ ہم نے 19 سالہ نوجوان کو ابتدائی طبی امداد فراہم کی۔ اس نوجوان کو سانس لینے میں دشواری ہو رہی تھی۔ اس نوجوان کو مصنوعی آکسیجن فراہم کی گئی۔ آہستہ آہستہ نوجوان ہوش میں آگیا۔ اپنے بیٹے کو زندہ دیکھ کر اس کے والد کی خوشی دیدنی تھی۔

خیال رہے ڈاکٹر أوراد محمد رضا نصر الله کئی سائنسی اور طبی جرائد میں ٹورنٹو یونیورسٹی میں جنرل سرجری فیلوشپ کا مطالعہ کرنے کے لیے سکالرشپ پر ہیں۔ وہ پلمونری کے علاج میں کینیڈا کے صوبے البرٹا کے ٹاپ 20 ڈاکٹروں کی فہرست میں شامل تھیں۔ وہ "empyema" کے نام سے معروف بیماری کے ساتھ ساتھ البرٹا یونیورسٹی کے شعبہ سرجری میں سرفہرست 10 رہائشی ڈاکٹروں کی فہرست میں بھی شامل ہیں۔

مقبول خبریں اہم خبریں