دو خلا بازوں سے براہ راست استفادہ، 9 ہزار سعودی طلبہ اہم تجربہ کے لیے تیار

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
دو منٹ read

سعودی عرب کے دو خلا بازوں ریانہ برناوی اور علی القرنی کا انٹرنیشنل سپیس سنٹر کا مشن جاری ہے۔ اسی تناظر میں سعودی عرب نے اپنے 9 ہزار طلبہ کے لیے دو خلا بازوں سے براہ راست استفادہ کرنے کا موقع فراہم کرنے کی تیاری کی ہے۔ یہ طلبہ زمین پر رہ کر خلا سے متعلق سائنسی تجربات سے آگاہ ہوں گے اور ان میں شرکت کریں گے۔

طلبہ مختلف اوقات میں 3 سائنسی تجربات سے گزریں گے۔ ہر تجربے میں مخصوص تعلیمی مرحلہ کے طلبہ شرکت کریں گے۔ سب سے پہلے پرائمری مرحلہ سے اوپر کے درجات کے طلبہ کے لیے لیکوئڈ کلر ڈفیوژن کا تجربہ پیش کیا جائے گا۔ اس کے بعد مڈل سکول کے طلبے کے لیے خلائی پتنگوں کا تجربہ منعقد کیا جائے گا۔ آخر میں ہائی سکول کے طلبہ کے لیے ہیٹ ٹرانسفر پیٹرن کا تجربہ رکھا گیا ہے۔

وائرلیس کنکشن

یہ تجربات طالب علموں کو بین الاقوامی خلائی سٹیشن پر زندگی کی تفصیلات کے بارے میں جاننے کے ساتھ ساتھ ریڈیو کمیونیکیشن کے ذریعے خلابازوں سے سوالات کرنے اور خلا سے متعلق اہم ترین لمحات اور سرگرمیوں کے بارے میں براہ راست جاننے کا موقع بھی فراہم کریں گے۔

تینوں تجربات سائنسی مراکز اور جدید ترین ٹیکنالوجی سے لیس سکولوں میں کیے گئے ہیں۔ یہ سکول خلائی جہاز کے ساتھ ساتھ اعلیٰ صلاحیت والے مواصلاتی آلات کے ساتھ رابطے کی اجازت دیتے ہیں۔ ان سکولوں کے پاس موجود آلات آواز اور تصویر کے معیار کو بھی یقینی بناتے ہیں۔

دونوں سعودی خلا باز دس روز کے اپنے مشن پر پیر 22 مئی کو روانہ ہوئے تھے اور اب عالمی خلائی سٹیشن میں موجود ہیں۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں