کیا امریکی خاتون اول اردنی ولی عہد کی خوش دامن کے پہناوے کی مداح نکلیں؟

جل بائیڈن کی اردن کے شاہی خاندان کی دعوت پر شہزادہ حسین بن عبداللہ کی شادی میں شرکت اور دلہن کی والدہ سے ملاقات توجہ کا مرکز

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
دو منٹ read

اردن کے ولی عہد شہزادہ حسین بن عبداللہ دوئم اور سعودی عرب کی رجوہ آل السیف کی شادی عالمی میڈیا کا اہم موضوع ہے اور اس اہم ایونٹ کو خصوصی کوریج مل رہی ہے۔ اس ضمن میں اردنی شاہی خاندان کی بہو بننے والی رجوہ کی والدہ اپنے دیدہ زیب لباس اور امریکی خاتون اول جل بائیڈن کے ساتھ ملاقات کی وجہ سے عوام و خواص کی توجہ کا مرکز بنی ہوئی ہیں۔

یہ تصویر رجوہ آل السیف کی والدہ اور امریکی صدر جو بائیڈن کی اہلیہ کے درمیان گفتگو کی ہیں جنہوں نے اس شاہی شادی میں شرکت کی۔

امریکی صدر کی اہلیہ جل بائیڈن اور دلہن رجوہ آل السیف اور شہزادہ حسین بن عبداللہ دوئم کی شادی کے موقع پر رجوہ کی والدہ سے ملاقات کی۔ ایسا لگتا ہے کہ بائیڈن کی اہلیہ نے دلہن کی والدہ کے لباس کی تعریف کی۔

عزہ السدیری نے یہ خوبصورت لباس اپنی بیٹی رجوہ کی شادی کے موقعے پر پہنا جسے بہت زیادہ پسند کیا گیا۔ عزہ کا لباس سعودی عرب کے روایتی پہناوں کی عکاسی کرتا ہے۔

سوشل میڈیا پر سماجی کارکنوں کا کہنا ہے کہ ام رجوہ اور جل بائیڈن کی ملاقات کے دوران امریکی خاتون اول نے رجوہ کی والدہ کو بتایا کہ دونوں لباس ایک ہی رنگ کے ہیں۔

شہزادی رجوہ کی والدہ محترمہ عزہ السدیری اس سے قبل مہندی کی تقریب میں سعودی ڈیزائنر ھنیدہ الصیرفی کے ڈیزائن کردہ شاہی نیلے رنگ کے ٹو پیس لباس میں جلوہ گر ہوئی تھیں۔ یہ ڈیزائن سعودی طرز کے القط العسیری سے متاثر ہے جسے المنجب لباس کہا جاتا ہے۔ اس لباس پر جیومیٹرک شکلوں اور رنگین نمونوں سے کڑھائی کی گئی تھی جو مملکت سعودی عرب کے جنوبی علاقے کی فطرت کی عکاسی کرتی ہے۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں