اقوام متحدہ کی اپیل پر فلسطینی مہاجرین کے لئے 10 کروڑ ڈالر امداد کا وعدہ

اقوام متحدہ کے مطابق فلسطینی مہاجرین کی مدد کے لئے مزید20 کروڑ ڈالر کی اشد ضرورت ہے

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
دو منٹ read

اقوام متحدہ کی ریلیف اینڈ ورکس ایجنسی برائے فلسطینی مہاجرین 'اونروا' کی جانب سے معاشی تعاون کی اپیل کے باوجود امدادی کانفرنس کے دوران محض 10 کروڑ ڈالر کے فنڈز کے نئے وعدے کئے گئے۔ تنظیم کے مطابق لاکھوں مہاجرین کی بحالی کے لئے قائم اداروں کو 30 کروڑ ڈالر کی مدد کی ضرورت ہے۔

اونروا کے کمشنر جنرل فلپ لازارینی نے ڈونرز کی جانب سے امداد کے وعدوں پر شکریہ ادا کرتے ہوئے کہا کہ امداد کے وعدے 700 سکولوں اور 140 کلینکس کو ستمبر سے دسمبر تک کھلا رکھنے کے لئے ناکافی ہیں۔

اپنے بیان میں فلپ کا کہنا تھا کہ "ہم مہاجرین کے میزبان ممالک سمیت اپنے پارٹنرز سے مل کر مہاجرین کے لئے ضروری رقم جمع کرنے کی ہر ممکن کوشش جاری رکھیں گے۔"

سال 2023ء کے آغاز میں اونروا نے شام، لبنان، اردن ، مقبوضہ مغربی کنارا، غزہ اور مشرقی بیت المقدس میں اپنے پروگرامات، آپریشنز اور ایمرجنسی ریسپانس کے لئے 1٫6 ارب ڈالر کی امداد کا بجٹ جاری کیا تھا۔

اونروا کے مطابق جمعہ کو ہونے والی ملاقات میں ڈونرز نے 81 کروڑ 23 لاکھ ڈالر کی یقین دہانیاں کرائی گئی ہیں جو کہ پہلے کئے گئے وعدوں میں صرف 10کروڑ کا اضافہ زیادہ ہیں۔

اونروا کے سربراہ کے مطابق تنظیم کو تمام سروسز سال کے آخر تک جاری رکھنے کے لئے 150 ملین ڈالر کی ضرورت ہے جبکہ 2024 کے اوائل میں کسی پریشانی کا سامنا کئے بغیر آپریشنز جاری رکھنےکے لئے 50 ملین ڈالر درکار ہیں۔

اقوام متحدہ کے ذیلی ادارے 'اونروا' کو 1948 میں اسرائیل کے قیام کے فورا بعد بے دخل ہونے والے لاکھوں فلسطینیوں کی بحالی کے لئے قائم کیا گیا تھا۔ آج 59 لاکھ فلسطینی غزہ، مغربی کنارے اور فلسطین کے ہمسایہ مسلمان ممالک میں مہاجرین کے طور پر آباد ہیں۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں