مصر، اسرائیل سرحد پر فائرنگ کا تبادلہ ،تین صہیونی فوجی اورایک مصری محافظ ہلاک

سکیورٹی اہلکارمنشیات اسمگلروں کا پیچھا کرتے اسرائیلی فوج کے ساتھ فائرنگ کے تبادلے میں مارا گیا: مصری فوج

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
3 منٹس read

اسرائیل کے جنوبی علاقے میں ہفتے کے روز فائرنگ کے تبادلے میں ایک مصری سرحدی محافظ اور تین صہیونی فوجی ہلاک ہو گئے ہیں۔دونوں ملکوں کے درمیان سرحد پر مہلک تشدد کا یہ نایاب واقعہ ہے۔

اسرائیلی فوج کے ترجمان لیفٹیننٹ کرنل رچرڈ ہیخت نے بتایا کہ لڑائی رات کو اس وقت شروع ہوئی جب فوجیوں نے سرحد پار منشیات کی اسمگلنگ کی کوشش کو ناکام بنا دیا۔

ترجمان کے مطابق فائرنگ کے تبادلے میں ایک سرحدی چوکی میں موجود دو فوجیوں کو گولی مار کر ہلاک کر دیا گیا۔ فائرنگ کے کئی گھنٹے بعد ان کی لاشیں ملی تھیں۔جب انھوں نے ریڈیو مواصلات کا کوئی جواب نہیں دیا تو ان کی ہلاکت کا پتا چلا تھا۔

ہیخت کا کہنا ہے کہ ان ہلاکتوں کا تعلق منشیات کی اسمگلنگ کی ناکام کوشش سے معلوم ہوتا ہے۔ اسرائیلی فوج نے سرحدی علاقے میں فائرنگ ایک اور تبادلے کی اطلاع دی ہے۔اس میں مصرکا ایک سرحدی محافظ مارا گیا اورایک تیسرا اسرائیلی فوجی ہلاک ہوا ہے۔

مصری فوج کا کہنا ہے کہ مصری سرحدی محافظ نے منشیات کے اسمگلروں کا تعاقب کرتے ہوئے سرحدی حفاظتی رکاوٹ عبور کرلی تھی اوراس کا اسرائیلی فورسز کے ساتھ فائرنگ کا تبادلہ ہوا تھا۔فوج کے بیان کے بیان کے مطابق مصر ی سرحدی محافظ تین اسرائیلی فوجیوں کے ساتھ مارا گیا۔

اسرائیلی فوج نے اپنے بیان میں کہا ہے کہ مصری فوج کے ساتھ فائرنگ کے اس واقعے کی تحقیقات میں مکمل تعاون کیا جا رہی ہے۔اس نے مزید کہا کہ فوجی دیگر ممکنہ حملہ آوروں کی تلاش میں ہیں۔گذشتہ ایک عشرے میں اسرائیل اور مصر کی سرحد پر فائرنگ کا یہ پہلا مہلک تبادلہ تھا۔اسرائیلی فوج کا کہنا ہے کہ ہلاک ہونے والوں میں ایک خاتون بھی شامل ہے۔

جرائم پیشہ افراد بعض اوقات سرحد پار منشیات اسمگل کرتے ہیں جبکہ انتہا پسند عسکریت پسند گروہ مصر کے شورش زدہ جزیرہ نما شمالی سینا میں سرگرم ہیں۔ اسرائیل اور مصر نے 1979 میں امن معاہدے پر دست خط کیے تھے اور وہ تب سے قریبی سکیورٹی تعلقات برقرار رکھے ہوئے ہیں۔ ان کی مشترکہ سرحد پر لڑائی شاذ و نادر ہی ہوتی ہے۔

اطلاعات کے مطابق فائرنگ کا تبادلہ اسرائیل اور مصر کے درمیان واقع نیتسانا سرحدی گذرگاہ کے قریب ہوا ہے۔ یہ کراسنگ اس مقام سے قریباً 40 کلومیٹر (25 میل) جنوب مشرق میں واقع ہے جہاں مصر اور غزہ کی پٹی کے ساتھ اسرائیل کی سرحد ملتی ہے۔ مصر سے اسرائیل یا حماس کے زیر انتظام غزہ کی پٹی کو سامان درآمد کرنے کے لیے اس سرحدی گذرگاہ کا استعمال کیا جاتا ہے۔

اسرائیل نے ایک دہائی قبل مصر کے علاقے صحرائے سیناء میں سرگرم افریقی تارکین وطن اور انتہا پسند عسکریت پسندوں کے داخلے کو روکنے کے لیے سرحد پر باڑ لگادی تھی۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں