سعودی معمر شخص جسے 40 سال سے نیند نہیں آئی

ڈاکٹروں نے ڈپریشن قرار دیا، شیوخ کی ہدایات پر عمل سے تکلیف کے باوجود اچھی زندگی بسر کر رہا: سعود الغامدی

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
1 منٹ read

سعودی عرب میں ایک بزرگ حیران کن طور پر 40 سال سے نہیں سوئے۔ بزرگ نے مسلسل 40 سال نیند نہ آنے کی وجہ سے ہونے والی تکلیف بیان کرتے ہوئے کہا کہ ’’میں ذہنی طور پر بیمار، پاگل یا جادوگر نہیں ہوں، لیکن میں ایک ایسا شخص ہوں جو باقی لوگوں کی طرح سو نہیں سکتا۔‘‘

Advertisement

70 سال کے سعود بن محمد الغامدی نے "ایم بی سی ان اے ویک" پروگرام میں انکشاف کیا کہ وہ اپنی حالت کی وجہ جاننے کے لیے ہسپتالوں اور متعدد شیوخ کے پاس جا چکے ہیں۔ سعود الغامدی نے بتایا میں ایک ہسپتال گیا جہاں ڈاکٹروں نے میرے لیے علاج تجویز کیا۔ علاج کرانے کے باوجود میری صورت حال میں کوئی تبدیلی نہیں آئی اور میں بدستور تکلیف اور اضطراب کا شکار ہوں ۔ انہوں نے بتایا کہ ڈاکٹروں نے میری حالت کو نفسیاتی ڈپریشن قرار دیا ہے۔

معمر شہری نے مزید بتایا کہ ڈاکٹروں کے علاج سے بہتری نہ آنے کے بعد میں اپنی حالت بیان کرنے کے لیے کئی شیوخ کے پاس گیا۔ شیوخ کو اپنا مسئلہ بتایا۔ انہوں نے کہا شیوخ کی ہدایات پر عمل کرنے کے بعد اب نہ سونے کی تکلیف سے گزرنے کے باوجود اچھی زندگی بسر کر رہا ہوں اور اپنا کام بھی کرتا ہوں ۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں